Piyo Keh Mahasal-E-Hosh Kis Ne Dekha Hai

Piyo Keh Mahasal-E-Hosh Kis Ne Dekha Hai

Piyo Keh Mahasal-E-Hosh Kis Ne Dekha Hai
Tamam weham-o-gumaan hai tamam dhooka hai

Nah kyun ho sahib jaam jahaan numa ko hasad
Sharab se mujhe apna suraagh milta hai

Kisi ne khwab ke raize palak palak chun kar
Jo shaahkar banaya hai toot sakta hai

Mein intezar karonga agar meri faryad
Abhi sukoot bah gulshan sada bah sahra hai

Yahi sawab hai kia kam meri riazat ka
Keh aik khaliq tere naam se shansa hai

Zahe naseeb keh uss ka mera khayal aaya
Magar yeh baat haqeqat nahi tamanna hai

Gunah gar hoon aye madar aadam mujh ko
Balak balak ke tere bazowon mein rona hai

Khameer aik hai sab ka to aye zameen aye maan
Zuban-o-mazhab-o-qoom-o-watan yeh sab kia hai

Ghalat sahi magar aasaan nahi keh ye nukta
Kisi hakeem ne apne lahu se likha hai

Payambaron ko utara gaya tha qomon par
Khuda ne mujh pah magar qaum ko utara hai

Pio keh mahasil hosh kis ne dekha hai
Tamam weham-o-gumaan hai tamam dhooka hai
غزل
پیو کہ ماحصل ہوش کس نے دیکھا ہے
تمام وہم و گماں ہے تمام دھوکا ہے

نہ کیوں ہو صاحب جام جہاں نما کو حسد
شراب سے مجھے اپنا سراغ ملتا ہے

کسی نے خواب کے ریزے پلک پلک چن کر
جو شاہکار بنایا ہے ٹوٹ سکتا ہے

میں انتظار کروں گا اگر مری فریاد
ابھی سکوت بہ گلشن صدا بہ صحرا ہے

یہی ثواب ہے کیا کم مری ریاضت کا
کہ ایک خلق ترے نام سے شناسا ہے

زہے نصیب کہ اُس کو مرا خیال آیا
مگر یہ بات حقیقت نہیں تمنا ہے

گناہ گار ہوں اے مادر عدم مجھ کو
بلک بلک کے ترے بازوؤں میں رونا ہے

خمیر ایک ہے سب کا تو اے زمین اے ماں
زبان و مذہب و قوم و وطن یہ سب کیا ہے

غلط سہی مگر آساں نہیں کہ یہ نکتہ
کسی حکیم نے اپنے لہو سے لکھا ہے

پیمبروں کو اُتارا گیا تھا قوموں پر
خدا نے مجھ پہ مگر قوم کو اُتارا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں