Koi Mazdah Na Bashaarat Na Dua Chahti Hai

Koi Mazdah Na Bashaarat Na Dua Chahti Hai

Koi Mazdah Na Bashaarat Na Dua Chahti Hai
Roz ek taza khabar khalq-e-khuda chahti hai

Mauj-e-khun sar se guzarni thi so wo bhi guzri
Aur kia koocha-e-qatil ki hawa chahti hai

Shehr-e-be-mehr mein lab basta ghulamon ki qatar
naye aain-e-asiri ki bina chahti hai

Koi bole ke na bole qadam uthen na uthen
Wo jo ek dil mein hai diwaar utha chahti hai

Hum bhi labbaik kahen aur fasana ban jayen
Koi aawaz sar-e-koh-e-nida chahti hai

Yahi lou thi keh ulajhti rahi har raat ke sath
Ab ke khud apni hawaon mein bujha chahti hai

Ahd-e-asoodgi-e- jaan mein bhi tha jaan se aziz
Wo qalam bhi mere dushman ki ana chahti hai

Bahr-e- pamali-e-gul aai hai aur mauj-e-khizan
Guftagu mein rawish-e-baad-e-saba chahti hai

Khak ko hum sar-e-mahtab kia raat ki raat
Khalq ab bhi wahi naqsh-e-kaf pa chahti hai

Koi mazdah na bashaarat na dua chahti hai
Roz ek taza khabar khalq-e-khuda chahti hai
غزل
کوئی مژدہ نہ بشارت نہ دعا چاہتی ہے
روز اک تازہ خبر خلق خدا چاہتی ہے

موج خوں سر سے گزرنی تھی سو وہ بھی گزری
اور کیا کوچۂ قاتل کی ہوا چاہتی ہے

شہر بے مہر میں لب بستہ غلاموں کی قطار
نئے آئین اسیری کی بنا چاہتی ہے

کوئی بولے کے نہ بولے قدم اٹھیں نہ اٹھیں
وہ جو اک دل میں ہے دیوار اٹھا چاہتی ہے

ہم بھی لبیک کہیں اور فسانہ بن جائیں
کوئی آواز سر کوہ ندا چاہتی ہے

یہی لو تھی کہ الجھتی رہی ہر رات کے ساتھ
اب کے خود اپنی ہواؤں میں بجھا چاہتی ہے

عہد آسودگی جاں میں بھی تھا جاں سے عزیز
وہ قلم بھی مرے دشمن کی انا چاہتی ہے

بہر پامالی گل آئی ہے اور موج خزاں
گفتگو میں روش باد صبا چاہتی ہے

خاک کو ہمسر مہتاب کیا رات کی رات
خلق اب بھی وہی نقش کف پا چاہتی ہے

کوئی مژدہ نہ بشارت نہ دعا چاہتی ہے
روز اک تازہ خبر خلق خدا چاہتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں