Yeh Khel Kya Hai

یہ کھیل کیا ہے :
مرے مخالف نے چال چل دی ہے
اور اب
میری چال کے انتظار میں ہے
مگر میں کب سے
سفید خانوں
سیاہ خانوں میں رکھے
کالے سفید مہروں کو دیکھتا ہوں
میں سوچتا ہوں
یہ مہرے کیا ہیں
اگر میں سمجھوں
کے یہ جو مہرے ہیں
صرف لکڑی کے ہیں کھلونے
تو جیتنا کیا ہے ہارنا کیا
نہ یہ ضروری
نہ وہ اہم ہے
اگر خوشی ہے نہ جیتنے کی
نہ ہارنے کا ہی کوئی غم ہے
تو کھیل کیا ہے
میں سوچتا ہوں
جو کھیلنا ہے
تو اپنے دل میں یقین کر لوں
یہ مہرے سچ مچ کے بادشاہ و وزیر
سچ مچ کے ہیں پیادے
اور ان کے آگے ہے
دشمنوں کی وہ فوج
رکھتی ہے جو کہ مجھ کو تباہ کرنے کے
سارے منصوبے
سب ارادے
مگر ایسا جو مان بھی لوں
تو سوچتا ہوں
یہ کھیل کب ہے
یہ جنگ ہے جس کو جیتنا ہے
یہ جنگ ہے جس میں سب ہے جائز
کوئی یہ کہتا ہے جیسے مجھ سے
یہ جنگ بھی ہے
یہ کھیل بھی ہے
یہ جنگ ہے پر کھلاڑیوں کی
یہ کھیل ہے جنگ کی طرح کا
میں سوچتا ہوں
جو کھیل ہے
اس میں اس طرح کا اصول کیوں ہے
کہ کوئی مہرہ رہے کہ جائے
مگر جو ہے بادشاہ
اس پر کبھی کوئی آنچ بھی نہ آئے
وزیر ہی کو ہے بس اجازت
کہ جس طرف بھی وہ چاہے جائے
میں سوچتا ہوں
جو کھیل ہے
اس میں اس طرح اصول کیوں ہے
پیادہ جو اپنے گھر سے نکلے
پلٹ کے واپس نہ جانے پائے
میں سوچتا ہوں
اگر یہی ہے اصول
تو پھر اصول کیا ہے
اگر یہی ہے یہ کھیل
تو پھر یہ کھیل کیا ہے
میں ان سوالوں سے جانے کب سے الجھ رہا ہوں
مرے مخالف نے چال چل دی ہے
اور اب میری چال کے انتظار میں ہے

 :Yeh Khel Kya Hai
mere mukhalif ne chaal chal di hai
aur ab
meri chaal ke intizar mein hai
magar main kab se
safed-khanon
siyah-khanon mein rakkhe
kale safed mohron ko dekhta hun
main sochta hun
ye mohre kya hain
agar main samjhun
ke ye jo mohre hain
sirf lakdi ke hain khilaune
to jitna kya hai haarna kya
na ye zaruri
na wo aham hai
agar khushi hai na jitne ki
na haarne ka hi koi gham hai
to khel kya hai
main sochta hun
jo khelna hai
to apne dil mein yaqin kar lun
ye mohre sach-much ke baadshah o wazir
sach-much ke hain payaade
aur in ke aage hai
dushmanon ki wo fauj
rakhti hai jo ki mujh ko tabah karne ke
sare mansube
sab irade
magar aisa jo man bhi lun
to sochta hun
ye khel kab hai
ye jang hai jis ko jitna hai
ye jang hai jis mein sab hai jaez
koi ye kahta hai jaise mujh se
ye jang bhi hai
ye khel bhi hai
ye jang hai par khiladiyon ki
ye khel hai jang ki tarah ka
main sochta hun
jo khel hai
is mein is tarah ka usul kyun hai
ki koi mohara rahe ki jae
magar jo hai baadshah
us par kabhi koi aanch bhi na aae
wazir hi ko hai bas ijazat
ki jis taraf bhi wo chahe jae
main sochta hun
jo khel hai
is mein is tarah usul kyun hai
piyaada jo apne ghar se nikle
palat ke wapas na jaane pae
main sochta hun
agar yahi hai usul
to phir usul kya hai
agar yahi hai ye khel
to phir ye khel kya hai
main in sawalon se jaane kab se ulajh raha hun
mere mukhalif ne chaal chal di hai
aur ab meri chaal ke intizar mein hai

اپنا تبصرہ بھیجیں