Sar-E-Baam Hijar Diya Bujha Tou Khabar Hoi

Sar-E-Baam Hijar Diya Bujha Tou Khabar Hoi

Sar-E-Baam Hijar Diya Bujha Tou Khabar Hoi
Sar-e-sham koi juda ho tu khabar hoi

Mera khush kharam bala ka taiz kharam tha
Meri zindagi se chala gaya tou khabar hoi

Mere saray harf tamam harf azab thay
Mere kam sukhan ne sukhan kia tu khabar hoi

Koi bat ban ke bigar gai tou pata chala
Mere bewafa ne karam kiya tu kharbar hoi

Mere ham safar ke safar ki samt hi aur thi
Kahin rasta koi gum howa tou khabar hoi

Mere qisssa go ne kahan kahan se barhai baat
Mujhe dastan ka sira mila tu khabar hoi

Na laho ka mausam rang rez na dil na mein
Koi khawab tha keh bikhar gaya tou khabar hoi

Sar-e-baam hijar diya bujha tou khabar hoi
Sar-e-sham koi juda ho tu khabar hoi
غزل
سربام ہجر دیا بجھا تو خبر ہوئی
سرشام کوئی جدا ہو تو خبر ہوئی

میرا خوش خرام بلا کا تیز خرام تھا
میری زندگی سے چلا گیا تو خبر ہوئی

میرے سارے حرف تمام حرف عذاب تھے
میرے کم سخن نے سخن کیا تو خبر ہوئی

کوئی بات بن کے بگڑ گئی تو پتہ چلا
میرے بے وفا نے کرم کیا تو خبر ہوئی

میرے ہم سفر کے سفر کی سمت ہی اور تھی
کہیں راستہ کوئی گم ہوا تو خبر ہوئی

میرے قصہ گو نے کہاں کہاں سے بڑھائی بات
مجھے داستاں کا سرا ملا تو خبر ہوئی

نہ لہو کا موسم رنگ ریز نہ دل نہ میں
کوئی خواب تھا کہ بکھر گیا تو خبر ہوئی

سربام ہجر دیا بجھا تو خبر ہوئی
سرشام کوئی جدا ہو تو خبر ہوئی

اپنا تبصرہ بھیجیں