Khowab Direna Se Rukhsat Ka Sabab Puchte Hain

Khowab Direna Se Rukhsat Ka Sabab Puchte Hain

Khowab Direna Se Rukhsat Ka Sabab Puchte Hain
Chalye pehle nahi pucha ab puchte hain

Ek hum hi tou nahi hain jo uthaty hain sawal
Jitne hain khak basar sheher ke sab puchte hain

Kaise Khush tabaa hai es sheher-e-dil azara ke log
Mojain khoob sar se guzar jati hain tab puchte hain

Khowab direna se rukhsat ka sabab puchte hain
Chalye pehle nahi pucha ab puchte hain
غزل
خوابِ دیرینہ سے رخصت کا سبب پوچھتے ہیں
چلئے پہلے نہیں پوچھاتھا اب پوچھتے ہیں

اک ہم ہی تو نہیں ہیں جو اٹھاتے ہیں سوال
جتنے ہیں خاک بسر شہر کے سب پوچھتے ہیں
 
کیسے خوش طعباءہے اس شہرِ دل ازارکے لوگ
موجیں خوب سر سے گزر جاتی ہیں تب پوچھتے ہیں

خوابِ دیرینہ سے رخصت کا سبب پوچھتے ہیں
چلئے پہلے نہیں پوچھاتھا اب پوچھتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں