Wo Rut Bhi Aai Keh Main Phool Ki Saheli Hoi

 غزل
وہ رُت بھی آئی کہ میں پھول کی سہیلی ہوئی
مہک میں چمپا کلی، روپ میں چنبیلی ہوئی

وہ سرد رات کی برکھا سے کیوں نہ پیار کروں
یہ رُت تو ہے مرے بچپن کی ساتھ کھیلی ہوئی

زمیں پہ پائوں نہیں پڑ رہے تکبر سے
نگارِ غم کوئی دُلہن نئی نویلی ہوئی

وہ چاند بن کے مرے ساتھ ساتھ چلتا رہا
میں اس کے ہجر کی راتوں میں کب اکیلی ہوئی

جو حرفِ سادہ کی صورت ہمیشہ لکھی گئی
وہ لڑکی تیرے لیے کس طرح پہیلی ہوئی
Ghazal
Wo Rut Bhi Aai Keh Main Phool Ki Saheli Hoi
Mehak Mein Champa’kali Roop Mein Chambeli Hoi

Main Sard Raat Ki Barkha Se Kion Na Pyaar Karo’n
Yahi Rut To Hai, Mere Bachpan K Saath Kheli Hoi

Zameen Pe Paao’n Nahin Parh Rahe Takabur Se
Nigaar-e-Gham, Koi Dulhan, Nai Naweli Hoi

Wo Chaand Ban K Mere Saath Saath Chalta Raha
Main Us K Hijr Ki Raato’n Mein Kab Akeli Hoi

Jo Harf-e-Saada Ki Soorat Hamesha Likhi Gai
Wo Larki Tere Liye Kis Tarah Paheli Hoi

اپنا تبصرہ بھیجیں