Bulati Hai Magar Jaane Ka Nain

بلاتی ہے مگر جانے کا نئیں
وہ دنیا ہے ادھر جانے کا نئیں
زمیں رکھنا پڑے سر پر تو رکھو
چلو ہو تو ٹھہر جانے کا نئیں
ہے دنیا چھوڑنا منظور لیکن
وطن کو چھوڑ کر جانے کا نئیں
جنازے ہی جنازے ہیں سڑک پر
ابھی ماحول مر جانے کا نئیں
ستارے نوچ کر لے جاؤں گا
میں خالی ہاتھ گھر جانے کا نئیں
مرے بیٹے کسی سے عشق کر
مگر حد سے گزر جانے کا نئیں
وہ گردن ناپتا ہے ناپ لے
مگر ظالم سے ڈر جانے کا نئیں
سڑک پر ارتھیاں ہی ارتھیاں ہیں
ابھی ماحول مر جانے کا نئیں
وبا پھیلی ہوئی ہے ہر طرف
ابھی ماحول مر جانے کا نئیں
bulati hai magar jaane ka nain
wo duniya hai udhar jaane ka nain
 
zamin rakhna pade sar par to rakkho
chalo ho to thahar jaane ka nain
 
hai duniya chhodna manzur lekin
watan ko chhod kar jaane ka nain
 
janaze hi janaze hain sadak par
abhi mahaul mar jaane ka nain
 
sitare noch kar le jaunga
main khali hath ghar jaane ka nain
 
mere bete kisi se ishq kar
magar had se guzar jaane ka nain
 
wo gardan napta hai nap le
magar zalim se dar jaane ka nain
 
sadak par arthiyan hi arthiyan hain
abhi mahaul mar jaane ka nain
 
waba phaili hui hai har taraf
abhi mahaul mar jaane ka nain

اپنا تبصرہ بھیجیں