Shab Wohi Lekin Sitar Aur Hai| Parveen Shakir

Shab Wohi Lekin Sitar Aur Hai| Parveen Shakir

Shab Wohi Lekin Sitar Aur Hai
Ab safar ka istiaara aur hai

Aik mithi rait mein kaise rahe
Iss samandar ka kinara aur hai

Mauj ke murne mein kitni dair hai
Nao dali aur dhar aur hai

Jang ka hatiyar te kuch aur tha
Teer seene mein utaara aur hai

Matan mein to juram sabit hai magar
Hashiya sare ka sara aur hai

Saath to mera zameen deti magar
Aasmaan ka hi ishara aur hai

Dhoop mein deewar hi kaam aaye gi
Taiz barish ka sahara aur hai

Haarne mein ik ana ki baat thi
Jeet jane mein khasara aur hai

Sukh ke mausam ungliyun par gin liye
Fasal ka gham ka goshwara aur hai

Dair se palken nahi jhapken meri
Paish jaan ab ke nizara aur hai

Aur Kuch Pal Us ka Rasta dekh lo
Aasmaan par aik tara aur hai

Had chiraghon ki yahan se khatam hai
Aaj se rasta hamara aur hai

Shab wohi lekin sitar aur hai
Ab safar ka istiaara aur hai
غزل
شب وہی لیکن ستارہ اور ہے
اب سفر کا استعارہ اور ہے

ایک مٹھی ریت میں کیسے رہے
اس سمندر کا کنارہ اور ہے

موج کے مڑنے میں کتنی دیر ہے
ناؤ ڈالی اور دھار اور ہے

جنگ کا ہتھیار طے کچھ اور تھا
تیر سینے میں اُتارا اور ہے

متن میں تو جرم ثابت ہے مگر
حاشیہ سارے کا سارا اور ہے

ساتھ تو میرا زمیں دیتی مگر
آسماں کا ہی اشارہ اور ہے

دھوپ میں دیوار ہی کام آئے گی
تیز بارش کا سہارا اور

ہارنے میں اک انا کی بات تھی
جیت جانے میں خسارا اور ہے

سکھ کے موسم انگلیوں پر گن لیے
فصل غم کا گوشوارہ اور ہے

دیر سے پلکیں نہیں جھپکیں مری
پیش جاں اب کے نظارہ اور ہے

اور کچھ پل اِس کا رستہ دیکھ لوں
آسماں پر ایک تارہ اور ہے

حد چراغوں کی یہاں سے ختم ہے
آج سے رستہ ہمارا اور ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں