Chara Gir Ay Chara Gir Chalati Thi

Chara Gir Ay Chara Gir Chalati Thi

Chara Gir Ay Chara Gir Chalati Thi
Zakhmon ko bhi hath nahi lagwati thi

Jane woh darya ka konsa hissa tha
Aag hamre jimson se takrati thi

Aakhir uss ne maan li ik afsar ki baat
Daftar daftar kitni dhakke khati thi

Pata nahi kaisa mahool tha uss ke ghar
Burqa pahen kar shirtein lenay aati thi
غزل
چارہ گر اے چارہ گر چلاتی تھی
زخموں کو بھی ہاتھ نہیں لگواتی تھی

جانے وہ دریا کا کونسا حصہ تھا
آگ ہمارے جسموں سے ٹکراتی تھی

آخر اُس نے مان لی اک افسر کی بات
دفتر دفتر کتنی دھکے کھاتی تھی

پتہ نہیں کیسا ماحول تھا اُس کے گھر
برقعہ پہن کر شرٹیں لینے آتی تھی

چارہ گر اے چارہ گر چلاتی تھی
زخموں کو بھی ہاتھ نہیں لگواتی تھی

اپنا تبصرہ بھیجیں