Hum Apne Raftagaan Ko Yaad Rakhna Chahte Hain

Hum Apne Raftagaan Ko Yaad Rakhna Chahte Hain

Hum Apne Raftagaan Ko Yaad Rakhna Chahte Hain
Dilon ko dard se abaad rakhna chahte hain

Mubaada mundamil zakhmon ki surat bhul hi jayen
Abhi kuch din ye ghar barbaad rakhna chahte hain

Bohat ronaq thi un ke dam qadam se shahr-e-jaan mein
Wahi ronaq hum un ke baad rakhna chahte hain

Bohat mushkil zamanon mein bhi hum ahl-e-mohabbat
Wafa par ishq ki bunyaad rakhna chahte hain

Saron mein ek hi soda keh lau dene lage khak
Umiden hasb-e-istidaad rakhna chahte hain

Kahin aisa na ho harf-e-dua mafhoom kho de
Dua ko surat-e-Faryaad rakhna chahte hain

Qalam aaloda nan-o-namak rahta hai phir bhi
Jahan tak ho sake aazad rakhna chahte hain

Hum apne raftagaan ko yaad rakhna chahte hain
Dilon ko dard se abaad rakhna chahte hain
غزل
ہم اپنے رفتگاں کو یاد رکھنا چاہتے ہیں
دلوں کو درد سے آباد رکھنا چاہتے ہیں

مبادا مندمل زخموں کی صورت بھول ہی جائیں
ابھی کچھ دن یہ گھر برباد رکھنا چاہتے ہیں

بہت رونق تھی ان کے دم قدم سے شہر جاں میں
وہی رونق ہم ان کے بعد رکھنا چاہتے ہیں

بہت مشکل زمانوں میں بھی ہم اہل محبت
وفا پر عشق کی بنیاد رکھنا چاہتے ہیں

سروں میں ایک ہی سودا کہ لو دینے لگے خاک
امیدیں حسب استعداد رکھنا چاہتے ہیں

کہیں ایسا نہ ہو حرف دعا مفہوم کھو دے
دعا کو صورت فریاد رکھنا چاہتے ہیں

قلم آلودۂ نان و نمک رہتا ہے پھر بھی
جہاں تک ہو سکے آزاد رکھنا چاہتے ہیں

ہم اپنے رفتگاں کو یاد رکھنا چاہتے ہیں
دلوں کو درد سے آباد رکھنا چاہتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں