Paail Kabhi Pahne Kabhi Kangan Usay Kehna

Ghazal
Paail Kabhi Pahne Kabhi Kangan Usay Kehna
Le aae mohabbat main naya fan usay kehna
 
May kush kabhi aankhon ke bharose nahi rehte
Shabnam kabhi bharti nahi bartan usay kehna
 
Ghar bar bhula deti hai daryaa ki mohabbat
Kashti main guzar jata hai jeewan usay kehna
 
Es habus main warna tu havaa tak nahi aati
Yeh tu hai dariichon ka bara pan usay kehna
 
Rahe rahe ke dahak uthti hai yeh aatish e vashat
Dewane hain sahraaon ka indhan usay kehna
 
Aik shab se zaid nahi hai dunyia ki musari
Aik shab say zaida nahi dhollan usay kehna
 
Kuch log kabhi lot kar gaon nahi ate
Kuch log bhula dete hain bachpan usay kehna
غزل
پائل کبھی پہنے کبھی کنگن اُسے کہنا
لے آئے محبت میں نیا فن اُسے کہنا
 
مئے کش کبھی آنکھوں کے بھروسے نہیں رہتے
شبنم کبھی بھرتی نہیں برتن اُسے کہنا
 
گھر بار بھلا دیتی ہے دریا کی محبت
کشتی میں گزر جاتا ہے جیون اُسے کہنا
 
اِس حبس میں ورنہ تو ہوا تک نہیں آتی
یہ تو ہے دریچوں کا بڑا پن اُسے کہنا
 
رہے رہے کے دہک اُٹھتی ہے یہ آتش وحشت
دیوانے ہیں صحراؤں کا ایندھن اُسے کہنا
 
ایک شب سے زیادہ نہیں دنیا کی مسہری
ایک شب سے زیادہ نہیں دولہن اُسے کہنا
 
کچھ لوگ کبھی لوٹ کر گاؤں نہیں آتے
کچھ لوگ بھلا دیتے ہیں بچپن اُسے کہنا

اپنا تبصرہ بھیجیں