Bas Aik Sabaq Bhoolna Mat Theek Nahi Hai

Bas Aik Sabaq Bhoolna Mat Theek Nahi Hai

Bas Aik Sabaq Bhoolna Mat Theek Nahi Hai
Iss ishq ki miti se jorat theek nahi hai

Ghar bar ki bunyaden agar pukhta nah hoon to
Daryawon ki yun aao bhugat theek nahi hai

Kaghaz ka makaan, dhoop mein saya tu hai lekin
Barsat ke mausam mein yeh chat theek nahi hai

Aankhon mein bari kam hai jagah toot nah jayen
Khawabon ki yahan aur khapat theek nahi hai

Har raisha-e-kirdaar ko achay se udhairo
Lagta hai kahani ki bunat theek nahi hai

Lakri ko lagay ghan ki tarah rog hain kitne
Dil theek to rehta hai bohat theek nahi hai

Behtar hai tera girya-o-wehshat se kinara
Jis umar mein lag jaye yeh lat theek nahi hai

Bas aik sabaq bhoolna mat theek nahi hai
Iss ishq ki miti se jorat theek nahi hai
غزل
بس ایک سبق بھولنا مت ٹھیک نہیں ہے
اِس عشق کی مٹی سے جڑت ٹھیک نہیں ہے

گھر بار کی بنیادیں اگر پختہ نہ ہوں تو
دریاؤں کی یوں آو بھگت ٹھیک نہیں ہے

کاغذ کا مکاں ، دھوپ میں سایہ تو ہے لیکن
برسات کے موسم میں یہ چھت ٹھیک نہیں ہے

آنکھوں میں بڑی کم ہے جگہ ، ٹوٹ نہ جائیں
خوابوں کی یہاں اور کھپت ٹھیک نہیں ہے

ہر ریشہ ء کردار کو اچھے سے ادھیڑو
لگتا ہے کہانی کی بُنت ٹھیک نہیں ہے

لکڑی کو لگے گھن کی طرح روگ ہیں کتنے
دل ٹھیک تو رہتا ہے بہت ٹھیک نہیں ہے

بہتر ہے ترا گریہ و وحشت سے کنارہ
جس عمر میں لگ جائے یہ لت ٹھیک نہیں ہے

بس ایک سبق بھولنا مت ٹھیک نہیں ہے
اِس عشق کی مٹی سے جڑت ٹھیک نہیں ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں