Halat-E-Hijr Mein Hun Yaar Meri Seemat Na Dekh

Halat-E-Hijr Mein Hun Yaar Meri Seemat Na Dekh

Ghazal
Halat-E-Hijr Mein Hun Yaar Meri Seemat Na Dekh
Tou na ho jaye giraftar meri seemat na dekh

Asteen mein jo chupay saanp hain un ko tou nikaal
Apne nuqsan pe har bar meri seemat na dekh

Tum ko jis baat ka khadsha hai wo ho sakti hai
Aise nashay mein lagatar meri seemat na dekh

Ya koi baat suna ya mujhe seenay se laga
Es-tarha baith ke be-qarar meri seemat na dekh

Tera mohabbat se nahi jaib se yarana hai
Aye mohabbat ke dokandar meri seemat na dekh

Halat-e-hijr mein hun yaar meri seemat na dekh
Tu na ho jaye giraftar meri seemat na dekh
غزل
حالتِ ہجر میں ہوں یار میری سمت نہ دیکھ
تو نہ ہو جائے گرفتار میری سمت نہ دیکھ

آستین میں جو چھپے سانپ ہیں اُن کو تو نکال
اپنے نقصان پہ ہر بار میری سمت نہ دیکھ

تم کو جس بات کا خدشہ ہے وہ ہو سکتی ہے
ایسے نشے میں لگاتار میری سمت نہ دیکھ

یا کوئی بات سنا یا مجھے سینے سے لگا
اسطرح بیٹھ کے بے قرار میری سمت نہ دیکھ

تیرا محبت سے نہیں جیب سے یارانہ ہے
آئے محبت کے دوکاندار میری سمت نہ دیکھ

حالتِ ہجر میں ہوں یار میری سمت نہ دیکھ
تو نہ ہو جائے گرفتار میری سمت نہ دیکھ

اپنا تبصرہ بھیجیں