Zarar Rasaan Hoon Bahut Aashna Hoon

Zarar Rasaan Hoon Bahut Aashna Hoon

Zarar Rasaan Hoon Bahut Aashna Hoon Mein Khud Se
Jabhi to fasla rakh kar khara hoon mein khud se

Salam kon kahin mil chukay hain kia pehle
Hazar bar yeh sab kehh chukka hoon mein khud se

Jhagarte waqt zara bhi lihaz rakhta nahi
Agarche umar mein kafi bara hoon mein khud se

Mujhe mili hai guzishta baras ki ek tasveer
Kahin kahin se bohat mil raha hoon mein khud se

Jo darmiyan se tum hat gaye tu aik gaya
Tumhari soch hai jitna khafa hoon mein khud se

Sawal likh ke yahan rakh do aur tum jao
Yeh kaam kar lon to phir poochta hoon mein khud se

Kahan talaash karon kia kahon kisi se umair
Keh aate jate kahin gir gaya hoon mein khud se

Zarar rasaan hoon bohat aashna hoon mein khud se
Jabhi to fasla rakh kar khara hoon mein khud se
غزل
ضرر رساں ہوں بہت آشنا ہوں میں خود سے
جبھی تو فاصلہ رکھ کر کھڑا ہوں میں خود سے

سلام کون کہیں مل چکے ہیں کیا پہلے
ہزار بار یہ سب کہہ چکا ہوں میں خود سے

جھگڑتے وقت ذرا بھی لحاظ رکھتا نہیں
اگرچہ عمر میں کافی بڑا ہوں میں خود سے

مجھے ملی ہے گزشتہ برس کی اک تصویر
کہیں کہیں سے بہت مل رہا ہوں میں خود سے

جو درمیان سے تم ہٹ گئے تو ایک گیا
تمہاری سوچ ہے جتنا خفا ہوں میں خود سے

سوال لکھ کے یہاں رکھ دو اور تم جاؤ
یہ کام کر لوں تو پھر پوچھتا ہوں میں خود سے

کہاں تلاش کروں کیا کہوں کسی سے عمیر
کہ آتے جاتے کہیں گر گیا ہوں میں خود سے

ضرر رساں ہوں بہت آشنا ہوں میں خود سے
جبھی تو فاصلہ رکھ کر کھڑا ہوں میں خود سے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں