Kia Soch Ke Deta Tha Woh Dastak Nahi Pochha

Kia Soch Ke Deta Tha Woh Dastak Nahi Pochha

Kia Soch Ke Deta Tha Woh Dastak Nahi Pochha
Aur dukh yeh howa naam pata tak nahi pochha

Mein khwab yahan bechnay aai hi nahi jab
Kia moul lagatay rahe gahak nahi pochha

Dharkan bhi aziyat thi magar wehshat dil se
Karni hai abhi aur bhi bak bak nahi pochha

Sajday mein bohat batein khudawand se ki hain
Mit sakti hai kia bakht ki kalak nahi pochha

Aankhon ki thakan dekh ke sab choank rahe hain
Logon ne zubaan se abhi be shak nahi pochha

Har aik ko suraaj ki tamazat se bachaya
Pairon ne kisi shakhs se maslak nahi pochha

Kia soch ke deta tha woh dastak nahi pochha
Aur dukh yeh howa naam pata tak nahi pochha
غزل
کیا سوچ کے دیتا تھا وہ دستک نہیں پوچھا
اور دکھ یہ ہوا نام پتہ تک نہیں پوچھا

میں خواب یہاں بیچنے آئی ہی نہیں جب
کیا مول لگاتے رہے گاہک نہیں پوچھا

دھڑکن بھی اذیت تھی مگر وحشت دل سے
کرنی ہے ابھی اور بھی بک بک نہیں پوچھا

سجدے میں بہت باتیں خداوند سے کی ہیں
مٹ سکتی ہے کیا بخت کی کالک نہیں پوچھا

آنکھوں کی تھکن دیکھ کے سب چونک رہے ہیں
لوگوں نے زباں سے ابھی بے شک نہیں پوچھا

ہر ایک کو سورج کی تمازت سے بچایا
پیڑوں نے کسی شخص سے مسلک نہیں پوچھا

کیا سوچ کے دیتا تھا وہ دستک نہیں پوچھا
اور دکھ یہ ہوا نام پتہ تک نہیں پوچھا

اپنا تبصرہ بھیجیں