Nihayat Pur Kashish Jismo Ko Thokaraya Howa Hun

Nihayat Pur Kashish Jismo Ko Thokaraya Howa Hun

Ghazal
Nihayat Pur Kashish Jismo Ko Thokaraya Howa Hun
Mein do kashmiri honto ka nemak khaya howa hun

Yeh thanday jism kia us ki kami poori karin gaye
Mein jis aag ke sholon ka dokhya howa hun

Tilism-e-zan ho ya dunya ka dhokha sab khabar hai
Mein do be-had haseen aankhon ka samjhya howa hun

Kai suchon ne ro ro kar usay manga tha mujh se
Mein jo iman tere jhot pe laya howa hun

Meri masti pe tujh se poch gush banti tou hai na
Sabhi ko ilm hai main kis ka behkaya howa hun

Nihayat pur kashish jismo ko thokaraya howa hun
Mein do kashmiri honto ka nemak khaya howa hun
غزل
نہایت پر کشش جسموں کو ٹھوکرایا ہوا ہوں
میں دو کشمیری ہونٹوں کا نمک کھایا ہوا ہوں

یہ ٹھنڈے جسم کیا اُس کی کمی پوری کریں گئے
میں جس آگ کے شعلوں کا دھکایا ہوا ہوں

طلسمِ زن ہو یا دنیا کا دھوکہ سب خبر ہے
میں دو بے حد حسیں آنکھوں کا سمجھایا ہوا ہوں

کئی سچوں نے رو رو کر اُسے مانگا تھا مجھ سے
میں جو ایمان تیرے جھوٹ پہ لایا ہوا ہوں

میری مستی پہ تجھ سے پوچھ گچھ بنتی تو ہے نا
سبھی کو علم ہے میں کس کا بہکایا ہوا ہوں

نہایت پر کشش جسموں کو ٹھوکرایا ہوا ہوں
میں دو کشمیری ہونٹوں کا نمک کھایا ہوا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں