Jo Faiz Se Sharf-E-Istifada Rakhtay Hain

Jo Faiz Se Sharf-E-Istifada Rakhtay Hain

Jo Faiz Se Sharf-E-Istifada Rakhtay Hain
Kuch ahl-e-dil se nisbat zyada rakhtay hain

Ramoz-e-mumlikat harf janne walay
Dilon ki surat maani kushada rakhtay hain

Shab-e-malal ham rah rawan-e-manzal ishq
Wisal-e-subha safar ka irada rakhtay hain

Jamal chehra farad se surkh ro hai jo khowab
Es ek khowab ko jada na jada rakhtay hain

Muqaam-e-shukar keh es koj ada miin bhi log
Lihaaz-e-harf dil aawaiz-o-sada rakhtay hain

Binaam-e-faiz, bujan-e-asad faqeer ke pas
Jo aye, aye ham dil kushada rakhtay hain

Jo faiz se sharf-e-istifada rakhtay hain
Kuch ahl-e-dil se nisbat zyada rakhtay hain
غزل
جو فیض سے شرفِ استفادہ رکھتے ہیں
کچھ اہل درد سے نسبت زیادہ رکھتے ہیں

رموزِ مملکت حرف جاننے والے
دلوں کی صورت معنی کشادہ رکھتے ہیں

شبِ ملال ہم رہ روانِ منزل عشق
وصالِ صبح سفر کا ارادہ رکھتے ہیں

جمال چہرہ فردا سے سرخ رو ہے جو خواب
اس ایک خوب کو جادہ نہ جادہ رکھتے ہیں

مقامِ شکر کہ اس کج ادا میں بھی لوگ
لحاظِ حرف دل آویز و سادہ رکھتے ہیں

بنامِ فیض، بجانِ اسد فقیر کے پاس
جو آئے، آئے ہم دل کشادہ رکھتے ہیں

جو فیض سے شرفِ استفادہ رکھتے ہیں
کچھ اہل درد سے نسبت زیادہ رکھتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں