Tujh Se Bichhad Ke Hum Bhi Muqaddar Ke

غزل
تجھ سے بچھڑ کے ہم بھی مقدر کے ہو گئے
پھر جو بھی در ملا ہے اسی در کے ہو گئے

پھر یوں ہوا کہ غیر کو دل سے لگا لیا
اندر وہ نفرتیں تھیں کہ باہر کے ہو گئے

کیا لوگ تھے کہ جان سے بڑھ کر عزیز تھے
اب دل سے محو نام بھی اکثر کے ہو گئے

اے یاد یار تجھ سے کریں کیا شکایتیں
اے درد ہجر ہم بھی تو پتھر کے ہو گئے

سمجھا رہے تھے مجھ کو سبھی ناصحان شہر
پھر رفتہ رفتہ خود اسی کافر کے ہو گئے

اب کے نہ انتظار کریں چارہ گر کہ ہم
اب کے گئے تو کوئے ستم گر کے ہو گئے

روتے ہو اک جزیرۂ جاں کو فرازؔ تم
دیکھو تو کتنے شہر سمندر کے ہو گئے
Ghazal
Tujh Se Bichhad Ke Hum Bhi Muqaddar Ke Ho Gae
Phir jo bhi dar mila hai usi dar ke ho gae
Phir yun hua ki ghair ko dil se laga liya
Andar wo nafraten thin ki bahar ke ho gae
Kya log the ki jaan se badh kar aziz the
Ab dil se mahw nam bhi aksar ke ho gae
Ai yaad yar tujh se karen kya shikayaten
Ai dard-e-hijr hum bhi to patthar ke ho gae
Samjha rahe the mujh ko sabhi nasehan-e-shahr
Phir rafta rafta KHud usi kafar ke ho gae
Ab ke na intizar karen chaaragar ki hum
Ab ke gae to ku-e-sitamgar ke ho gae
Rote ho ek jazira-e-jaan ko ‘faraaz’ tum
Dekho to kitne shahr samundar ke ho gae

اپنا تبصرہ بھیجیں