Ashk Apna Ki Tumhaara Nahin Dekha Jata

Ashk Apna Ki Tumhaara Nahi Dekha Jata
abr ki zad mein sitara nahin dekha jata

apni shah-e-rag ka lahu tan mein rawan hai jab tak
zer-e-khanjar koi pyara nahin dekha jata
 
mauj-dar-mauj ulajhne ki hawas be-mani
dubta ho to sahaara nahin dekha jata
 
tere chehre ki kashish thi ki palat kar dekha
warna suraj to dobara nahin dekha jata
 
aag ki zid pe na ja phir se bhadak sakti hai
rakh ki tah mein sharara nahin dekha jata
 
zakhm aankhon ke bhi sahte the kabhi dil wale
ab to abru ka ishaara nahin dekha jata
 
kya qayamat hai ki dil jis ka nagar hai ‘mohsin’
dil pe us ka bhi ijara nahin dekha jata
غزل
اشک اپنا کہ تمہارا نہیں دیکھا جاتا
ابر کی زد میں ستارا نہیں دیکھا جاتا
 
اپنی شہ رگ کا لہو تن میں رواں ہے جب تک
زیر خنجر کوئی پیارا نہیں دیکھا جاتا
 
موج در موج الجھنے کی ہوس بے معنی
ڈوبتا ہو تو سہارا نہیں دیکھا جاتا
 
تیرے چہرے کی کش تھی کہ پلٹ کر دیکھاش
ورنہ سورج تو دوبارہ نہیں دیکھا جاتا
 
آگ کی ضد پہ نہ جا پھر سے بھڑک سکتی ہے
راکھ کی تہہ میں شرارہ نہیں دیکھا جاتا
 
زخم آنکھوں کے بھی سہتے تھے کبھی دل والے
اب تو ابرو کا اشارا نہیں دیکھا جاتا
 
کیا قیامت ہے کہ دل جس کا نگر ہے محسنؔ
دل پہ اس کا بھی اجارہ نہیں دیکھا جاتا

اپنا تبصرہ بھیجیں