Naqaab Urra To Mujhe Surkh Lab Dikhayi Diye

Naqaab Urra To Mujhe Surkh Lab Dikhayi Diye

Naqaab Urra To Mujhe Surkh Lab Dikhayi Diye
Woh do diye jo hawa ke sabab dikhayi diye

Mein juzwi andha tha do char rang dikhte thay
Jab uss ne mujh se kaha dekh sab dikhayi diye

Kisi ke saath kisi bagh mein teheltay hoye
Tamam phool bohat baa adab dikhayi diye

Khala mein ghoorun tu jo chehre bannay lagte hain
Pataa nahi yeh kahan aur kab dikhayi diye

Dabay hoye thay kai khwab aansowon ke talay
Mein ro ke soya hoon ik sham tab dikhayi diye

Nazar jhuki hi nahi iss se qabal herat hai
Keh uss ke paon bicharnay ki shab dikhayi diye

Safar mein janaa mere dost woh nahi jo lagay
Nazar to aatay thay har roz ab dikhayi diye

Ajab ujaar jazeeron ki simt aa gaya hoon
Mujhe laga tha kinaray hain jab dikhayi diye

Naqaab urra tu mujhe surkh lab dikhayi diye
Woh do diye jo hawa ke sabab dikhayi diye
غزل
نقاب اُڑا تو مجھے سرخ لب دکھائی دیئے
وہ دو دیے جو ہوا کے سبب دکھائی دیئے

میں جزوی اندھا تھا دو چار رنگ دکھتے تھے
جب اُس نے مجھ سے کہا دیکھ سب دکھائی دیئے

کسی کے ساتھ کسی باغ میں ٹہلتے ہوئے
تمام پھول بہت با ادب دکھائی دیئے

خلا میں گھوروں تو جو چہرے بننے لگتے ہیں
پتہ نہیں یہ کہاں اور کب دکھائی دیئے

دبے ہوئے تھے کئی خواب آنسوؤں کے تلے
میں رو کے سویا ہوں اک شام تب دکھائی دیئے

نظر جھکی ہی نہیں اس سے قبل حیرت ہے
کہ اُس کے پاوں بچھڑنے کی شب دکھائی دیئے

سفر میں جانا مرے دوست وہ نہیں جو لگے
نظر تو آتے تھے ہر روز اب دکھائی دیئے

عجب اُجاڑ جزیروں کی سمت آگیا ہوں
مجھے لگا تھا کنارے ہیں جب دکھائی دیئے

نقاب اُڑا تو مجھے سرخ لب دکھائی دیئے
وہ دو دیے جو ہوا کے سبب دکھائی دیئے

اپنا تبصرہ بھیجیں