Tere Kiyaa Ka Zamana Mujh Se Hisab Le Ga

Ghazal
Tere Kiyaa Ka Zamana Mujh Se Hisab Le Ga
Tera kia hai tujhe tou koi bhi bakhsh day ga

Haqeer ma bhi nahi hun apne badon se kehna
Mera bhi shajra kisi payambar se ja milay ga

Main apne bacho ko khud padhaun ga aur aise
Keh kuch kitabon ka koi matlab nahi rehe ga

Humare pehle banane walay to mit gaye hain
Hamain dubara banane walon ka kia bane ga

Yeh dil tu kuch bhi nahi uski hansi ke agay
Wo ro bhi day ga to sari dunyia kharid le ga

Kise khabar thi main jis ko dunyia padha raha hun
Mera wo beta mera janaaza galat padhay ga
غزل
تیرے کیے کا زمانہ مجھ سے حساب لے گا
تیرا کیا ہے تجھے تو کوئی بھی بخش دے گا

حقیر میں بھی نہیں ہوں اپنے بڑوں سے کہنا
میرا بھی شجرہ کسی پیعمبر سے جا ملے گا

میں اپنے بچوں کو خود پڑھاؤں گا اور ایسے
کہ کچھ کتابوں کا کوئی مطلب نہیں رہے گا

ہمارے پہلے بنانے والے تو مٹ گئے ہیں
ہمیں دوبارہ بنانے والوں کا کیا بنے گا

یہ دل تو کچھ بھی نہیں ہے اُس کی ہنسی کے آگے
وہ رو بھی دے گا تو ساری دنیا خرید لے گا

کسے خبر تھی میں جس کو دنیا پڑھا رہا ہوں
میرا وہ بیٹا میرا جنازہ غلط پڑھے گا

اپنا تبصرہ بھیجیں