Jo Sunta Hoon Kahun Ga Mein Jo Kehta Hoon

Jo Sunta Hoon Kahun Ga Mein Jo Kehta Hoon

Jo Sunta Hoon Kahun Ga Mein Jo Kehta Hoon Sonun Ga Mein
Hamesha majlas nataq-o-samat mein rahonga mein

Nahi hai talkh goi sheewa sanjedangaan lekin
Mujhe woh gaaliyan dengay to kia chup sadah longa mein

Kam az kam ghar to apna hai agar wiraan bhi hoga
To dehleez-o-dar-o-deewar se batein karunga mein

Yahi ehsas kafi hai keh kia tha aur ab kia hoon
Mujhe bilkul nahi tashweesh aagay kia banuga mein

Meri aankhon ka sona chahe mitti mein bikhar jaye
Andheri raat teri maang mein afshaan bharonga mein

Hasool aaghi ke waqt kash itni khabar hoti
Keh yeh woh aag hai jis aag mein zinda jalunga mein

Koi ik aadh to hoga mujh jo raas aa jaye
Basaat waqt par hain jis qadar mohre chalunga mein

Agar iss martaba bhi aarzun puri nahi hogi
To iss ke bad akhir kis bharose par jiyunga mein

Yahi hoga kisi din doob jaon ga samandar mein
Tamanaon ki khali sepiyan kab tak chunuga mein

Jo sunta hoon kahun ga mein jo kehta hoon sonun ga mein
Hamesha majlas nataq-o-samat mein rahonga mein
غزل
جو سنتا ہوں کہوں گا میں جو کہتا ہوں سنوں گا میں
ہمیشہ مجلس نطق و سماعت میں رہوں گا میں

نہیں ہے تلخ گوئی شیوہ سنجیدگاں لیکن
مجھے وہ گالیاں دیں گے تو کیا چپ سادھ لوں گا میں

کم از کم گھر تو اپنا ہے اگر ویراں بھی ہوگا
تو دہلیز و در و دیوار سے باتیں کروں گا میں

یہی احساس کافی ہے کہ کیا تھا اور اب کیا ہوں
مجھے بالکل نہیں تشویش آگے کیا بنوں گا میں

مری آنکھوں کا سونا چاہے مٹی میں بکھر جائے
اندھیری رات تیری مانگ میں افشاں بھروں گا میں

حصول آگہی کے وقت کاش اتنی خبر ہوتی
کہ یہ وہ آگ ہے جس آگ میں زندہ جلوں گا میں

کوئی اک آدھ تو ہوگا مجھے جو راس آ جائے
بساط وقت پر ہیں جس قدر مہرے چلوں گا میں

اگر اس مرتبہ بھی آرزو پوری نہیں ہوگی
تو اس کے بعد آخر کس بھروسے پر جیوں گا میں

یہی ہوگا کسی دن ڈوب جاؤں گا سمندر میں
تمناؤں کی خالی سیپیاں کب تک چنوں گا میں

اپنا تبصرہ بھیجیں