Imtehan Ham Nay Diye Es Dara-E-Fani Mein Bahut

Imtehan Ham Nay Diye Es Dara-E-Fani Mein Bahut

Imtehan Ham Nay Diye Es Dara-E-Fani Mein Bahut
Ranj khinchay apni la-makani mein bahut

Wo nahi hai es sa tou hai kawab bahar-e-jawadan
Asal ki khushbo urri hai us ke sani mein bahot

Raat din ke anay jane mein yeh sona jagna
Fikar walon ko patay hain es nishani mein bahot

Koelain kokain bahot dewar gulshan ki taraf
Chand damka hoz ke shafaf pani mein bahot

Es ko kia yaadain thi kia aur kis jagha per reh gai
Tez hai dary-e-dil apni rawani mein bahot

Aaj es mehfil mein tujh ko boltay dekha munir
Tu keh jo mashoor tha yun be zabani mein bahot

Imtehan ham nay diye es dara-e-fani mein bahut
Ranj khinchay apni la makani mein bahut
غزل
امتحاں ہم نے دیے اس دار فانی میں بہت
رنج کھنچھے اپنی لامکانی میں بہت

وہ نہیں ہے اس سا تو ہے خواب بہار جاوداں
اصل کی خوشبو اُڑی ہے اس کے ثانی میں بہت

رات دن کے آنے جانے میں یہ سونا جاگنا
فکر والوں کو پتے ہیں اس نشانی میں بہت

کوئلیں کوکیں بہت دیوار گلشن کی طرف
چاند دمکا حوض کے شفاف پانی میں بہت

اس کو کیا یادیں تھیں کیا اور کس جگہ پر رہ گئیں
تیز ہے دریائے دل اپنی روانی میں بہت

آج اس محفل میں تجھ کو بولتے دیکھا منیرؔ
تو کہ جو مشہور تھا یوں بے زبانی میں بہت

امتحاں ہم نے دیے اس دار فانی میں بہت
رنج کھنچھے اپنی لامکانی میں بہت

اپنا تبصرہ بھیجیں