Pahunchi Hai Kis Tarah Mere Lab Tak Nahi Pata

Pahunchi Hai Kis Tarah Mere Lab Tak Nahi Pata

Pahunchi Hai Kis Tarah Mere Lab Tak Nahi Pata
Woh baat jis ka khud mujhe ab tak nahi pata

Acha mein hath uthaaon bataon falaan falaan
Yani khuda ko meri talab tak nahi pata

Ik din udaasiyon ko dawa dhoondlen gay log
Hum log hoon gay ya nahi tab tak nahi pata

Kab se hai kis qadar hai yeh kaisay pata chalay
Mujh ko tu iss junoon ka sabab tak nahi pata

Jis ke sabab mein ahl-e-mohabbat ke saath hoon
Woh shakhs mere saath hai kab tak nahi pata

Mein aaj kamyab hoon khushbash hoon magar
Kia faida hai yar usay jab tak nahi pata

Hum kia khushi ghami ki mahafil mein hoon shareek
Hum ko tu farq ranj-o-tarb tak nahi pataa

Pahunchi hai kis tarah mere lab tak nahi pata
Woh baat jis ka khud mujhe ab tak nahi pata
غزل
پہنچی ہے کس طرح مرے لب تک نہیں پتہ
وہ بات جس کا خود مجھے اب تک نہیں پتہ

اچھا میں ہاتھ اُٹھاؤں، بتاؤں فلاں فلاں
یعنی خدا کو میری طلب تک نہیں پتہ

اک دن اُداسیوں کی دوا ڈھونڈلیں گے لوگ
ہم لوگ ہوں گے یا نہیں تب تک نہیں پتہ

کب سے ہے کس قدر ہے ، یہ کیسے پتہ چلے
مجھ کو تو اِس جنوں کا سبب تک نہیں پتہ

جس کے سبب میں اہلِ محبت کے ساتھ ہوں
وہ شخص میرے ساتھ ہے کب تک نہیں پتہ

میں آج کامیاب ہوں ، خوش باش ہوں مگر
کیا فائدہ ہے یار! اُسے جب تک نہیں پتہ

ہم کیا خوشی، غمی کی محافل میں ہوں شریک
ہم کو تو فرق رنج و طرب تک نہیں پتہ

پہنچی ہے کس طرح مرے لب تک نہیں پتہ
وہ بات جس کا خود مجھے اب تک نہیں پتہ
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں