Bohat Hi Be-Waqoofi Kar Rahe Hain

Bohat Hi Be-Waqoofi Kar Rahe Hain

Bohat Hi Be-Waqoofi Kar Rahe Hain
Jo aisa kamra khali kar rahe hain

Yeh kis ki nao utri paniyon mein
Jazeere doobne ki kar rahe hain

Samandar theek hain apni jaga par
Machhere chhair khani kar rahe hain

Mein jin ke gham mein aadha reh giya hoon
Woh apni baat puri kar rahe hain

Bohat seedhe thay apne baap dada
Tabhi hum khaiti-bari kar rahe hain

Ufaq par urr rahi hain fakhtaien
Nah Lashkar paish qadmi kar rahe hain

Bahishton se nikale jane wale
Zameen par mauj masti kar rahe hain

Sitare kya batayen raston ka
Hamein aawara gardi kar rahe hain

Bohat hi be waqoofi kar rahe hain
Jo aisa kamra khali kar rahe hain
غزل
بہت ہی بے وقوفی کر رہے ہیں
جو ایسا کمرہ خالی کر رہے ہیں

یہ کس کی ناؤ اتری پانیوں میں
جزیرے ڈوبنے کی کر رہے ہیں

سمندر ٹھیک ہیں اپنی جگہ پر
مچھیرے چھیڑخانی کر رہے ہیں

میں جن کے غم میں آدھا رہ گیا ہوں
وہ اپنی بات پوری کر رہے ہیں

بہت سیدھے تھے اپنے باپ دادا
تبھی ہم کھیتی باڑی کر رہے ہیں

اُفق پر اُڑ رہی ہیں فاختائیں
نہ لشکر پیش قدمی کر رہےہیں

بہشتوں سے نکالے جانے والے
زمیں پر موج مستی کر رہے ہیں

ستارے کیا بتائیں راستوں کا
ہمیں آوارہ گردی کر رہے ہیں

بہت ہی بے وقوفی کر رہے ہیں
جو ایسا کمرہ خالی کر رہے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں