Galiyon Ki Bas Khaak Urra Ke Jana Hai| shayari in urdu

Galiyon Ki Bas Khaak Urra Ke Jana Hai| shayari

Galiyon Ki Bas Khaak Urra Ke Jana Hai
Hum ko bhi aawaz laga ke jana hai

Raste mein deewar hai totay khwabon ki
Hum ko woh deewar gira ke jana hai

Hum bhi ik din aaye ga jab jayenge
Hum ko bhi yeh rasam nibha ke jana hai

Jo bhi hai woh sab mitti ho jayega
Hum ko bas ik khwab bacha ke jana hai

Mere andar sadiyon ki khamoshi hai
Tum ko woh aawaz suna ke jana hai

Tum ko bhi ik khwab mukammal karna tha
Hum ko bhi tasveer bana ke jana hai

Galiyon ki bas khaak urra ke jana hai
Hum ko bhi aawaz laga ke jana hai
غزل
گلیوں کی بس خاک اُڑا کے جانا ہے
ہم کو بھی آواز لگا کے جانا ہے

رستے میں دیوار ہے ٹوٹے خوابوں کی
ہم کو وہ دیوار گرا کے جانا ہے

ہم بھی اک دن آئے گا جب جائیں گے
ہم کو بھی یہ رسم نبھا کے جانا ہے

جو بھی ہے وہ سب مٹی ہو جائے گا
ہم کو بس اک خواب بچا کے جانا ہے

میرے اندر صدیوں کی خاموشی ہے
تم کو وہ آواز سنا کے جانا ہے

تم کو بھی اک خواب مکمل کرنا تھا
ہم کو بھی تصویر بنا کے جانا ہے

گلیوں کی بس خاک اُڑا کے جانا ہے
ہم کو بھی آواز لگا کے جانا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں