Bahut Roya Wo Hum Ko Yaad Kar Ke

غزل
بہت رویا وہ ہم کو یاد کر کے
ہماری زندگی برباد کر کے

پلٹ کر پھر یہیں آ جائیں گے ہم
وہ دیکھے تو ہمیں آزاد کر کے

رہائی کی کوئی صورت نہیں ہے
مگر ہاں منت صیاد کر کے

بدن میرا چھوا تھا اس نے لیکن
گیا ہے روح کو آباد کر کے

ہر آمر طول دینا چاہتا ہے
مقرر ظلم کی میعاد کر کے
Ghazal
Bahut Roya Wo Hum Ko Yaad Kar Ke
Hamari zindagi barbaad kar ke
 
PalaT kar phir yahin aa jaenge hum
Wo dekhe to hamein aazad kar ke
 
Rihai ki koi surat nahin hai
Magar han minnat-e-sayyaad kar ke
 
Badan mera chhua tha us ne lekin
Gaya hai ruh ko aabaad kar ke
 
Har aamir tul dena chahta hai
Muqarrar zulm ki miad kar ke

اپنا تبصرہ بھیجیں