Kaseer Zakhmon Ki Tadaad Hote Dekhna Hai

Kaseer Zakhmon Ki Tadaad Hote Dekhna Hai

Kaseer Zakhmon Ki Tadaad Hote Dekhna Hai
Junoon ko sahib-e-aulaad hote dekhna hai

Khuda ki simt le aai hai rayigani usay
Yeh goya kofay ko baghdad hote dekhna hai

Bas itnay waqt ki binai chahiye keh usay
Kisi ke hijr mein barbaad hote dekhna hai

Koi tu khul do pajra keh aik qaidi ne
Parinda qaid se aazad hote dekhna hai

Jawaz poocha bicharnay ka jab, kaha uss ne
Tumharay hussan ko be daad hote dekhna hai

Khudaya umar barhana sukhanoron ki mujhe
Sukhan ke dasht ko aabad hote dekhna hai

Kaseer zakhmon ki tadaad hote dekhna hai
Junoon ko sahib-e-aulaad hote dekhna hai
غزل
کثیر زخموں کی تعداد ہوتے دیکھنا ہے
جُنوں کو صاحبِ اولاد ہوتے دیکھنا ہے

خدا کی سمت لے آئی ہے رائیگانی اُسے
یہ گویا کوفے کو بغداد ہوتے دیکھنا ہے

بس اِتنے وقت کی بینائی چاہئیے کہ اُسے
کسی کے ہجر میں برباد ہوتے دیکھنا ہے

کوئی تو کھول دو پنجرہ کہ ایک قیدی نے
پرندہ قید سے آزاد ہوتے دیکھنا ہے

جواز پوچھا بچھڑنے کا جب، کہا اُس نے
تمہارے حُسن کو بے داد ہوتے دیکھنا ہے

خدایا عمر بڑھانا سخنوروں کی مجھے
سخن کے دشت کو آباد ہوتے دیکھنا ہے

کثیر زخموں کی تعداد ہوتے دیکھنا ہے
جُنوں کو صاحبِ اولاد ہوتے دیکھنا ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں