Shikasta Par Junoon Ko Aazmayenge| Ghazal

Shikasta Par Junoon Ko Aazmayenge| Ghazal

Shikasta Par Junoon Ko Aazmayenge Nahi Kya
Uranoo ke liye par phar pharayenge nahi kia

Hawayein meherban theen muntaqim kyun hogayi hain
Negha-waran sahil kuch batayenge nahi kia

Koi hasta howa soraaj pas diwaar tareek
Farwazan ho tou diwaarein girayenge nahi kya

Wohi pehli si arzani sar-e-bazar pandaar
Nazar aaye tou hum qeemmat bharyenge nahi kya

Sawad tishnagi ke par ik mouj darya
Ghazal khwan ho tou phir taisay uthayenge nahi kya

Badalte mausamon ki dhool hotay raston ko
Thakay hare musafir yaad aayenge nahi kya

Shikasta par junoon ko aazmayenge nahi kya
Uranoo ke liye par phar pharayenge nahi kia
غزل
شکستہ پر جنوں کو آزمائیں گے نہیں کیا
اڑانوں کے لیے پر پھڑ پھڑائیں گے نہیں کیا

ہوائیں مہرباں تھیں منتقم کیوں ہوگئی ہیں
نگہ وارن ساحل کچھ بتائیں گے نہیں کیا

کوئی ہنستا ہوا سورج پس دیوار تاریک
فروزاں ہو تو دیواریں گرائیں گے نہیں کیا

وہی پہلی سی ارزانی سر بازار پندار
نظر آئے تو ہم قیمت بڑھائیں گے نہیں کیا

سواد تشنگی کے پار اک مواج دریا
غزل خواں ہو تو پھر تیشے اٹھائیں گے نہیں کیا

بدلتے موسموں کی دھول ہوتے راستوں کو
تھکے ہارے مسافر یاد آئیں گے نہیں کیا

شکستہ پر جنوں کو آزمائیں گے نہیں کیا
اڑانوں کے لیے پر پھڑ پھڑائیں گے نہیں کیا

اپنا تبصرہ بھیجیں