Wo Jhoot Baat Peh Sedhay Sabhao Aaya Tha

Wo Jhoot Baat Peh Sedhay Sabhao Aaya Tha

Wo Jhoot Baat Peh Sedhay Sabhao Aaya Tha
So dostana fizza mein tanao aaya tha

Mein talkh hoti thi pehle pehal bohat mujh mein
Bari hi mushkilon se rakh rakhao aaya tha

Hawaye zard sahi sab se dostana hai
Mein kehh ke aai parinday ko aao aaya tha

Nah uth saki kabhi umeed sar uthati hoi
Dil-o-dimagh par aisa dabao aaya tha

Laboon peh jam gai pairi qadam shikasta thay
Abhi to dasht mein pehla parao aaya tha

Tumhein hi shoq tha apni ana ganwanay ka
Jisay pukara tha tum ne sunao aaya tha

Yeh chot iss liye hai jan se azeez mujhe
Kisi azeez ki janib se ghao aaya tha

Wo jhoot baat peh sedhay sabhao aaya tha
So dostana fizza mein tanao aaya tha
غزل
وہ جھوٹ بات پہ سیدھے سبھاؤ آیا تھا
سو دوستانہ فضا میں تناؤ آیا تھا

میں تلخ ہوتی تھی پہلے پہل بہت مجھ میں
بڑی ہی مشکلوں سے رکھ رکھاؤ آیا تھا

ہوائے زرد سہی سب سے دوستانہ ہے
میں کہہ کے آئی پرندے کو آؤ آیا تھا

نہ اُٹھ سکی کبھی اُمید سر اُٹھاتی ہوئی
دل و دماغ پر ایسا دباؤ آیا تھا

لبوں پہ جم گئی پیڑی قدم شکستہ تھے
ابھی تو دشت میں پہلا پڑاؤ آیا تھا

تمہیں ہی شوق تھا اپنی انا گنوانے کا
جسے پکارا تھا تم نے سناؤ آیا تھا

یہ چوٹ اس لئے ہے جان سے عزیز مجھے
کسی عزیز کی جانب سے گھاؤ آیا تھا

وہ جھوٹ بات پہ سیدھے سبھاؤ آیا تھا
سو دوستانہ فضا میں تناؤ آیا تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں