Sukhan Se Bhartay Thay Safhaat Kat Dete Thay

Sukhan Se Bhartay Thay Safhaat Kat Dete Thay

Sukhan Se Bhartay Thay Safhaat Kat Dete Thay
Hum iss amal mein har ik raat kat dete thay

Dukhi nah ho faqt ujrat kati hai aye mamaar
Suna hai pehlay yahan hath kaat dete thay

Farishtay meri munajat likhtay thay lekin
Khuda se meri shikayat kaat dete thay

Issi liye mujhe adat hai taiz bolnay ki
Keh bachpanay mein bare baat kaat dete thay

Ghalat sawal bohat pochta tha so ustad
Mere durust jawabat kaat dete thay

Woh waqt shab mein mujhe kaatnay ko aata tha
Jo din mein aap mere saath kaat dete thay

Mein aas pass ke pairon se khoob ulajhta tha
So baghban mere paat kaat dete thay

Sukhan e bhartay thay safhaat kat dete thay
Hum iss amal mein har ik raat kat dete thay
غزل
سخن سے بھرتے تھے صفحات کاٹ دیتے تھے
ہم اِس عمل میں ہر اک رات کاٹ دیتے تھے

دُکھی نہ ہو فقط اُجرت کٹی ہے اے معمار
سنا ہے پہلے یہاں ہاتھ کاٹ دیتے تھے

فرشتے میری مناجات لکھتے تھے لیکن
خدا سے میری شکایات کاٹ دیتے تھے

اِسی لئے مجھے عادت ہے تیز بولنے کی
کہ بچپنے میں بڑے بات کاٹ دیتے تھے

غلط سوال بہت پوچھتا تھا سو استاد
مرے درست جوابات کاٹ دیتے تھے

وہ وقت شب میں مجھے کاٹنے کو آتا تھا
جو دن میں آپ مرے ساتھ کاٹ دیتے تھے

میں آس پاس کے پیڑوں سے خوب اُلجھتا تھا
سو باغبان مرے پات کاٹ دیتے تھے

سخن سے بھرتے تھے صفحات کاٹ دیتے تھے
ہم اِس عمل میں ہر اک رات کاٹ دیتے تھے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں