Koi Milta Nahin Ye Bojh Uthane Ke Liye

غزل

کوئی ملتا نہیں یہ بوجھ اٹھانے کے لیے

شام بے چین ہے سورج کو گرانے کے لیے

اپنے ہم زاد درختوں میں کھڑا سوچتا ہوں

میں تو آیا تھا انہیں آگ لگانے کے لیے

میں نے تو جسم کی دیوار ہی ڈھائی ہے فقط

قبر تک کھودتے ہیں لوگ خزانے کے لیے

دو پلک بیچ کبھی راہ نہ پائی ورنہ

میں نے کوشش تو بہت کی نظر آنے کے لیے

لفظ تو لفظ یہاں دھوپ نکل آتی ہے

تیری آواز کی بارش میں نہانے کے لیے

کس طرح ترک تعلق کا میں سوچوں تابشؔ

ہاتھ کو کاٹنا پڑتا ہے چھڑانے کے لیے

Ghazal
Koi Milta Nahin Ye Bojh Uthane Ke Liye
Sham bechain hai suraj ko girane ke liye

Apne ham-zad darakhton mein khada sochta hun
Main to aaya tha inhen aag lagane ke liye

Main ne to jism ki diwar hi dhai hai faqat
Qabr tak khodte hain log khazane ke liye

Do palak bich kabhi rah na pai warna
Main ne koshish to bahut ki nazar aane ke liye

Lafz to lafz yahan dhup nikal aati hai
Teri aawaz ki barish mein nahane ke liye

Kis tarah tark-e-talluq ka main sochun ‘tabish’
Hath ko katna padta hai chhudane ke liye

اپنا تبصرہ بھیجیں