Mere Liye Kaun Sochta Hai

مرے لیے کون سوچتا ہے
جدا جدا ہیں مرے قبیلے کے لوگ سارے
جدا جدا سب کی صورتیں ہیں

 

سبھی کو اپنی انا کے اندھے کنویں کی تہ میں پڑے ہوئے
خواہشوں کے پنجر
ہوس کے ٹکڑے
حواس ریزے
ہراس کنکر تلاشنا ہیں

سبھی کو اپنے بدن کی شہ رگ میں
قطرہ قطرہ لہو کا لاوا انڈیلنا ہے

سبھی کو گزرے دنوں کے دریا کا دکھ
وراثت میں جھیلنا ہے

مرے لئے کون سوچتا ہے
سبھی کی اپنی ضرورتیں ہیں

مری رگیں چھلتی جراحت کو کون بخشے
شفا کی شبنم
مری اداسی کو کون بہلائے

کسی کو فرصت ہے مجھ سے پوچھے
کہ میری آنکھیں گلاب کیوں ہیں

مری مشقت کی شاخ عریاں پر
سازشوں کے عذاب کیوں ہیں

مری ہتھیلی پہ خواب کیوں ہیں
مرے سفر میں سراب کیوں ہیں

مرے لیے کون سوچتا ہے
سبھی کے دل میں کدورتیں ہیں
Mere Liye Kaun Sochta Hai
juda juda hain mere qabile ke log sare
juda juda sab ki suraten hain
sabhi ko apni ana ke andhe kuen ki tah mein pade hue
khwahishon ke pinjar
hawas ke Tukde
hawas reze
hiras kankar talashna hain
sabhi ko apne badan ki shah-e-rag mein
qatra qatra lahu ka lawa undelna hai
sabhi ko guzre dinon ke dariya ka dukh
wirasat mein jhelna hai
mere liye kaun sochta hai
sabhi ki apni zaruraten hain
meri ragen chhilti jarahat ko kaun bakhshe
shifa ki shabnam
meri udasi ko kaun bahlae
kisi ko fursat hai mujh se puchhe
ki meri aankhen gulab kyun hain
meri mashaqqat ki shakh-e-uriyan par
sazishon ke azab kyun hain
meri hatheli pe khwab kyun hain
mere safar mein sarab kyun hain
mere liye kaun sochta hai
sabhi ke dil mein kuduraten hain

اپنا تبصرہ بھیجیں