Pursish-E-Gham Ka Shukriya Kya Tujhe Aagahi Nahin

شاعر:احسان دانش
غزل
پرسش غم کا شکریہ کیا تجھے آگہی نہیں
تیرے بغیر زندگی درد ہے زندگی نہیں

دیکھ کے خشک و زرد پھول دل ہے کچھ اس طرح ملول
جیسے مری خزاں کے بعد دور بہار ہی نہیں

دور تھا اک گزر چکا نشہ تھا اک اتر چکا
اب وہ مقام ہے جہاں شکوۂ بے رخی نہیں

عشرت خلد کے لیے زاہد کج نظر جھکے
مشرب عشق میں تو یہ جرم ہے بندگی نہیں

تیرے سوا کروں پسند کیا تری کائنات میں
دونوں جہاں کی نعمتیں قیمت بندگی نہیں

لاکھ زمانہ ظلم ڈھائے وقت نہ وہ خدا دکھائے
جب مجھے ہو یقیں کہ تو حاصل زندگی نہیں

دل کی شگفتگی کے ساتھ راحت مے کدہ گئی
فرصت مے کشی تو ہے حسرت مے کشی نہیں

اشک رواں کی آب و تاب کر نہ عوام میں خراب
عظمت عشق کو سمجھ گریۂ غم ہنسی نہیں

عرصۂ فرقت و فراق ایسا طویل تو نہ تھا
بھول رہے ہو تم مجھے میں کوئی اجنبی نہیں

زخم پہ زخم کھا کے جی اپنے لہو کے گھونٹ پی
آہ نہ کر لبوں کو سی عشق ہے دل لگی نہیں

ایک وہ رات تھی کہ جب تھا مرے گھر وہ ماہتاب
ایک یہ رات ہے کہ اب چاند ہے چاندنی نہیں

مژدہ کہ نا مراد عشق تیری غزل کا ہے وہ رنگ
وہ بھی پکار اٹھے کہ یہ سحر ہے شاعری نہیں

Ghazal

Pursish-E-Gham Ka Shukriya Kya Tujhe Aagahi Nahin
Tere baghair zindagi dard hai zindagi nahin

Dekh ke khushk o zard phul dil hai kuchh is tarah malul
Jaise meri khizan ke baad daur-e-bahaar hi nahin

Daur tha ek guzar chuka nasha tha ek utar chuka
Ab wo maqam hai jahan shikwa-e-be-rukhi nahin

Ishrat-e-khuld ke liye zahid-e-kaj-nazar jhuke
Mashrab-e-ishq mein to ye jurm hai bandagi nahin

Tere siwa karun pasand kya teri kaenat mein
Donon jahan ki nematen qimat-e-bandagi nahin

Lakh zamana zulm dhae waqt na wo khuda dikhae
Jab mujhe ho yaqin ki tu hasil-e-zindagi nahin

Dil ki shaguftagi ke sath rahat-e-mai-kada gai
Fursat-e-mai-kashi to hai hasrat-e-mai-kashi nahin

Ashk-e-rawan ki aab-o-tab kar na awam mein kharab
Azmat-e-ishq ko samajh girya-e-gham hansi nahin

Arsa-e-furqat-o-firaq aisa tawil to na tha
Bhul rahe ho tum mujhe main koi ajnabi nahin

Zakhm pe zakhm kha ke ji apne lahu ke ghunt pi 
Aah na kar labon ko si ishq hai dil-lagi nahin 

Ek wo raat thi ki jab tha mere ghar wo mahtab 
Ek ye raat hai ki ab chand hai chandni nahin 

Muzhda ki na-murad-e-ishq teri ghazal ka hai wo rang 
Wo bhi pukar uThe ki ye sehr hai shairi nahin

اپنا تبصرہ بھیجیں