Yeh Payam De Gaii Hai Mujhy

غزل
یہ پیام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی
کہ خودی کے عارفوں کا ہے مقام پادشاہی

تری زندگی اسی سے تری آبرو اسی سے
جو رہی خودی تو شاہی نہ رہی تو رو سیاہی

نہ دیا نشان منزل مجھے اے حکیم تو نے
مجھے کیا گلہ ہو تجھ سے تو نہ رہ نشیں نہ راہی

مرے حلقۂ سخن میں ابھی زیر تربیت ہیں
وہ گدا کہ جانتے ہیں رہ و رسم کج کلاہی

یہ معاملے ہیں نازک جو تری رضا ہو تو کر
کہ مجھے تو خوش نہ آیا یہ طریق خانقاہی

تو ہما کا ہے شکاری ابھی ابتدا ہے تیری
نہیں مصلحت سے خالی یہ جہان مرغ و ماہی

تو عرب ہو یا عجم ہو ترا لا الٰہ الا
لغت غریب جب تک ترا دل نہ دے گواہی
Ghazal
Yeh Payam De Gaii Hai Mujhy Bad.e.Subah Gahi
Keh Khudi Ky Aarfon Ka Hai Maqam Padshahi
 
Teri Zindagi Isi Se Teri Aabru Isi Se
Jo Rahi Khudi To Shahi Na rahi To Roo Syahi
 
Na Diya Nishan.e.Manzil Mujhy Ay Hakeem Tu Ne
Mujhy Kya Gilah Ho Tujh Se Tu Na Rah Nasheen Na Rahi
 
Mere Halqah.e.Sukhan Mein Abhi Zer.e.Tarbiyat Hain
Who Gada Keh Janty Hain Rah.o.Rasm Kal Kalahi
 
Yeh Moamly Hain Nazuk Jo Teri Raza Ho Tu Kar
Keh Mujhy To Khush Na Aya Yeh Tareek Khankahi
 
Tu Huma Ka Hai Shikari Abhi Ibteda Hai Teri
Nahi Maslehat Se Khali Yeh Jahan Murgh.o.Mahi
 
Tu Arab Ho Ya Ajam Ho Tera La ila Ha Ilalah
Lughat Ghareeb Jab Tak Tera Dil Na De Gawahi

اپنا تبصرہ بھیجیں