Naya Sa Dukh Hai Puranay Har Gham Se Mukhtalif

Naya Sa Dukh Hai Puranay Har Gham Se Mukhtalif

Naya Sa Dukh Hai Puranay Har Gham Se Mukhtalif Hai
So mera girya bhi aam maatam se mukhtalif hai

Tumhari aawaz mein ghuli taazgi se jana
Wahan ka mausam yahan ke mausam se mukhtalif hai

Yeh tum jo kehte ho farq hai ishq aur junoon mein
Tumhara matlab hai aab shabnam se mukhtalif hai

Kaha to tha tum se tum yahan ke liye nahi ho
Tumhara paikar hi nasal-e-aadam se mukhtalif hai

Yeh aik tarfa junoon ka moujza hai sahib
Hum uss ke jaisay hain aur woh hum se mukhtalif hai

Tamaam rishtaay hain ik taraf aur ik taraf maa
Yeh aik tasveer saray album se mukhtalif hai

Jawan umri mein jhuk gai hai kamar hamari
Yeh hijar ka kham hai umar ke kham se mukhtalif

Naya sa dukh hai puranay har gham se mukhtalif hai
So mera girya bhi aam maatam se mukhtalif hai
غزل
نیا سا دکھ ہے پرانے ہر غم سے مختلف ہے
سو میرا گریہ بھی عام ماتم سے مختلف ہے

تمہاری آواز میں گھلی تازگی سے جانا
وہاں کا موسم یہاں کے موسم سے مختلف ہے

یہ تم جو کہتے ہو فرق ہے عشق اور جنوں میں
تمہارا مطلب ہے آب شبنم سے مختلف ہے

کہا تو تھا تم سے تم یہاں کے لئے نہیں ہو
تمہارا پیکر ہی نسلِ آدم سے مختلف ہے

یہ ایک طرفہ جنون کا معجزہ ہے صاحب
ہم اُس کے جیسے ہیں اور وہ ہم سے مختلف ہے

تمام رشتے ہیں اک طرف اور اک طرف ماں
یہ ایک تصویر سارے البم سے مختلف ہے

جوان عمری میں جھک گئی ہے کمر ہماری
یہ ہجر کا خم ہے عمر کے خم سے مختلف ہے

نیا سا دکھ ہے پرانے ہر غم سے مختلف ہے
سو میرا گریہ بھی عام ماتم سے مختلف ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں