Dil Hi To Hai Na Sang-o-Khisht Dard Se

دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں
روئیں گے ہم ہزار بار کوئی ہمیں ستائے کیوں
دیر نہیں حرم نہیں در نہیں آستاں نہیں
بیٹھے ہیں رہ گزر پہ ہم غیر ہمیں اٹھائے کیوں
جب وہ جمال دلفروز صورت مہر نیمروز
آپ ہی ہو نظارہ سوز پردے میں منہ چھپائے کیوں
دشنۂ غمزہ جاں ستاں ناوک ناز بے پناہ
تیرا ہی عکس رخ سہی سامنے تیرے آئے کیوں
قید حیات و بند غم اصل میں دونوں ایک ہیں
موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پائے کیوں
حسن اور اس پہ حسن ظن رہ گئی بوالہوس کی شرم
اپنے پہ اعتماد ہے غیر کو آزمائے کیوں
واں وہ غرور عز و ناز یاں یہ حجاب پاس وضع
راہ میں ہم ملیں کہاں بزم میں وہ بلائے کیوں
ہاں وہ نہیں خدا پرست جاؤ وہ بے وفا سہی
جس کو ہو دین و دل عزیز اس کی گلی میں جائے کیوں
غالبؔ خستہ کے بغیر کون سے کام بند ہیں
روئیے زار زار کیا کیجیے ہائے ہائے کیوں
dil hi to hai na sang-o-khisht dard se bhar na aae kyun
roenge hum hazar bar koi hamein satae kyun
dair nahin haram nahin dar nahin aastan nahin
baithe hain rahguzar pe hum ghair hamein uthae kyun
jab wo jamal-e-dil-faroz surat-e-mehr-e-nim-roz
aap hi ho nazzara-soz parde mein munh chhupae kyun
dashna-e-ghamza jaan-sitan nawak-e-naz be-panah
tera hi aks-e-rukh sahi samne tere aae kyun
qaid-e-hayat o band-e-gham asl mein donon ek hain
maut se pahle aadmi gham se najat pae kyun
husn aur us pe husn-e-zan rah gai bul-hawas ki sharm
apne pe e’timad hai ghair ko aazmae kyun
wan wo ghurur-e-izz-o-naz yan ye hijab-e-pas-e-waza
rah mein hum milen kahan bazm mein wo bulae kyun
han wo nahin khuda-parast jao wo bewafa sahi
jis ko ho din o dil aziz us ki gali mein jae kyun
‘ghaalib’-e-khasta ke baghair kaun se kaam band hain
roiye zar zar kya kijiye hae hae kyun

اپنا تبصرہ بھیجیں