Aik Bad Zaat Ki Chahat Ka| Afkar Alvi New Ghazal

Aik Bad Zaat Ki Chahat Ka| Afkar Alvi New Ghazal

Aik Bad Zaat Ki Chahat Ka Aseer Aadmi Tha
Hansi aati hai keh mein kaisa faqeer aadmi tha

Jis ki mein pehli mohabbat tha wo kehte hoon gay
Awwal awwal jisay chaha woh aakheer aadmi tha

Kuch bhi manwa liya karta tha woh mujh se ro kar
Dukhti rag bhanp geya tha bara aadmi tha

Khud bulandi peh mujhe laa ke girane wale
Mujhe se kya dushmani thi mein tou faqeer aadmi tha

Iss ke dil ko laga aur mere jigar paar howa
Woh koi teer nahi tha mere veer aadmi tha

Kuch nah ho tujh ko tujhe dekh ke dar jata hoon
Mein ik dour mein tujh jaisa shareer aadmi tha

Nayein mujhe mere nah hone ka nahi dukh afkar
Dukh tou yeh hai keh tere sath haqeer aadmi tha

Aik bad zaat ki chahat ka aseer aadmi tha
Hansi aati hai keh mein kaisa faqeer aadmi tha
غزل
ایک بد ذات کی چاہت کا اسیر آدمی تھا
ہنسی آتی ہے کہ میں کیسا فقیر آدمی تھا

جن کی میں پہلی محبت تھا وہ کہتے ہوں گے
اوّل اوّل جسے چاہا وہ آخیر آدمی تھا

کچھ بھی منوا لیا کرتا تھا وہ مجھ سے رو کر
دُکھتی رگ بھانپ گیا تھا بڑا آدمی تھا

خود بلندی پہ مجھے لاکے گرانے والے
مجھ سے کیا دشمنی تھی میں تو فقیر آدمی تھا

اس کے دل کو لگا اور میرے جگر پار ہوا
وہ کوئی تیر نہیں تھا میرے ویر آدمی تھا

کچھ نہ ہو تجھ کو تجھے دیکھ کے ڈر جاتا ہوں
میں بھی اک دور میں تجھ جیسا شریر آدمی تھا

نئیں مجھے میرے نہ ہونے کا نہیں دُکھ افکار
دکھ تو یہ ہے کہ تیرے ساتھ حقیر آدمی تھا

ایک بد ذات کی چاہت کا اسیر آدمی تھا
ہنسی آتی ہے کہ میں کیسا فقیر آدمی تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں