Mera Malik Jab Taufeeq Arzani Karta Hai

Mera Malik Jab Taufeeq Arzani Karta Hai

Mera Malik Jab Taufeeq Arzani Karta Hai
Gehra zarra zamin ki rangat dhani karta hai

Bujhte hoy diye ki lau aur bhegi aankh ke bich
Koi tou hai jo khwabon ki nigrani karta hai

Malik se aur mitti se aur maan se baghi shakhs
Dard ke har misaq se ro-gardani karta hai

Yadon se aur khwabon se aur umeedon se rabt
Ho jaye tou jeene mein aasani karta hai

Kia jane kab kis sa’at mein taba rawan ho jaye
Ye dariya be-mausam bhi tughyani karta hai

Dil pagal hai roz nayi nadani karta hai
Aag mein aag milata hai phir pani karta hai

Mera malik jab taufeeq arzani karta hai
Gehra zarra zamin ki rangat dhani karta hai
غزل
میرا مالک جب توفیق ارزانی کرتا ہے
گہرا رزہ زمین کی رنگت دھانی کرتا ہے

بجھتے ہوئے دیئے کی لو اور بھیگی انکھ کے بیچ
کوئی تو ہے جو خوابوں کی نگرانی کرتا ہے

مالک سے اور مٹی سے اور ماں سے باغی شخص
درد کے ہر میثاق سے رو گردانی کرتا ہے

یادوں سے اور خوابوں سے اور امیدوں سے ربط
ہو جائے تو جینے میں اسانی کرتا ہے

کیا جانے کب کس ساعت میں طبع رواں ہو جائے
یہ دریا بے موسم بھی طغیانی کرتا ہے

دل پاگل ہے روز نئی نادانی کرتا ہے
اگ میں اگ ملاتا ہے پھر پانی کرتا ہے

میرا مالک جب توفیق ارزانی کرتا ہے
گہرا رزہ زمین کی رنگت دھانی کرتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں