Diyar-E-Noor Mein Tira Shabon Ka Sathi Ho

Diyar-E-Noor Mein Tira Shabon Ka Sathi Ho

Diyar-E-Noor Mein Tira Shabon Ka Sathi Ho
Koi tu ho jo meri vahshaton ka sathi ho

Mein us se jhut bhi bolun to mujh se sach bolay
Mire mijaz ke sab mausamon ka sathi ho

Mein us ke haath na aaun wo mera ho ke rahe
Mein gir parron to meri pastiyon ka sathi ho

Wo mere naam ki nisbat se moatabar thahre
Gali gali meri rusvayon ka sathi ho

Kare kalam jo mujh se to mere lehje mein
Mein chup rahun to mere tevaron ka sathi ho

Mein apne aap ko dekhun wo mujh ko dekhe jae
Wo mere nags ki gumrahiyon ka sathi ho

Wo khwab dekhe to dekhe mire hawale se
Mire khyal ke sab manzaron ka sathi ho

Diyar-e-noor mein tira shabon ka sathi ho
Koi tu ho jo meri vahshaton ka sathi ho
غزل
دیارِ نور میں تیرہ شبوں کا ساتھی ہو
کوئی تو ہو جو مری وحشتوں کا ساتھی ہو

میں اس سے جھوٹ بھی بولوں تو مجھ سے سچ بولے
مرے مزاج کے سب موسموں کا ساتھی ہو

میں اس کےہاتھ نہ آوں وہ میرا ہو کے رہے
میں گر پڑوں تو مری پستیوں کا ساتھی ہو

وہ مرے نام کی نسبت سے معتبر ٹھرے
گلی گلی مری رسوائیوں کا ساتھی ہو

کرے کلام مجھ سے تو میرے لہجے میں
میں چپ رہوں تو میرے تیوروں کا ساتھی ہو

میں اپنے آپ کو دیکھوں وہ مجھ کو دیکھے جائے
وہ میرے نفس کی گمراہیوں کا ساتھی ہو

وہ خواب دیکھے تو دیکھے مرے حوالے سے
مرے خیال کے سب منظروں کا ساتھی ہو

دیارِ نور میں تیرہ شبوں کا ساتھی ہو
کوئی تو ہو جو مری وحشتوں کا ساتھی ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں