Miley To Kaise Miley Manzil E Khazina Khowab

Miley To Kaise Miley Manzil E Khazina Khowab

Miley To Kaise Miley Manzil E Khazina Khowab
Kahan damishq e muqaddar kahan madina khwab

Siyah khana e khof o hiras mein ek shakhs
Suna raha hai musalsal hadees e zina khwab

Yaqeen ka wird o wazifa na isam e azam e ishq
Tou phir yeh kaise khule ga tilism e seena-e-khwab

Jahan jahan ki bhi mitti hamein pasand ayi
Wahan wahan pe amant kia dafina e khwab

Kharoosh-e-girya be ikhtiyar aisa tha
Tarkh ke toot gaya raat aabgeena khwab

Shikast e khwab guzishta pe Noha Khawani hoi
Phir es k bad saji mehfill shabeena khwab

Miley tu kaise miley manzil e khazina khowab
Kahan damishq e muqaddar kahan madina khwab
غزل
ملے تو کیسے ملے منزل خزینہ خواب
کہاں دمشق مقدر کہاں مدینہ خواب

سیاہ خانہ خوف و ہراس میں اک شخص
سنا رہا ہے مسلسل حد یثِ زینہ خواب

یقیں کا ورد و ظیفہ نہ اسم اغظم عشق
تو پھر یہ کیسے کھلے گا طلسم سینہ خواب

جہاں جہاں کی بھی مٹی ہمیں پسند آئی
وہاں وہاں پہ امانت کیا دفینہ خواب

خروش گریہ بے اختیا ر ایسا تھا
تڑخ کے ٹوٹ گیا رات آبگینئہ خواب

شکست خواب گزشتہ پہ نوحۃ خوانی ہوئی
پھر اس کے بعد سجی محفل شبینہ خواب

ملے تو کیسے ملے منزل خزینہ خواب
کہاں دمشق مقدر کہاں مدینہ خواب

اپنا تبصرہ بھیجیں