Aye Khuda Hum Ko Dar Zeist Jo Khasta Dena

Aye Khuda Hum Ko Dar Zeist Jo Khasta Dena

Aye Khuda Hum Ko Dar Zeist Jo Khasta Dena
Yaar logon ko kabhi soch nah pasta dena

Yeh bhi Sayyad ka ehsan hai baikar sahi
Pukhta zindaan mein zanjeer shikasta dena

Chaak duniya ka agar ulta ghumana khaliq
Phir wohi umar kitabain wohi basta dena

Pehle khwabon ka abhi qarz chukana hai mujhe
Aa dukaan-daar naya khwab tu sasta dena

Taiz pani ki tarah sab ko baha leti hoon
Mein rukawat se nahi kehti keh rasta dena

Aye khuda hum ko dar zeist jo khasta dena
Yaar logon ko kabhi soch nah pasta dena
غزل
اے خدا ہم کو درِ زیست جو خستہ دینا
یار لوگوں کو کبھی سوچ نہ پستہ دینا

یہ بھی صیاد کا احسان ہے بیکار سہی
پختہ زندان میں زنجیر شکستہ دینا

چاک دنیا کا اگر اُلٹا گھمانا خالق
پھر وہی عمر کتابیں وہی بستہ دینا

پہلے خوابوں کا ابھی قرض چکانا ہے مجھے
اے دکاں دار نیا خواب تو سستا دینا

تیز پانی کی طرح سب کو بہا لیتی ہوں
میں رکاوٹ سے نہیں کہتی کہ رستہ دینا

اے خدا ہم کو درِ زیست جو خستہ دینا
یار لوگوں کو کبھی سوچ نہ پستہ دینا

اپنا تبصرہ بھیجیں