Kuch Dair Pehle Neend Se

Kuch Dair Pehle Neend Se

Kuch Dair Pehle Neend Se
Mein jin ko chorr aaya tha shanasayi ki basti kay wo saray raste aawaz dete hain

Nahi maloom ab kis wastay aawaz dete hain
Laho mein khak urti hai
Badan khwahish dhaha raha nay
Aur nafs ki aamad-o-shad dil ki na humwarion par ben karti hai
Wo saray khwab aik ek kar kay rukhsat ho chukay hain jin say aankhin jagti theey
Aur umeon kay rozan shahr aaindah mein khulte thay
Bahut aahista aahista
Andhera dil mein aakhon mein laho mein behte behte jam gaya hai
Waqt jaise tham gaya hai
Bas ab aik aur shab aik aur pal saray rastay band hongay
Wo pal jab saray bandhan khirkiyan aangan, umeeden, aarzoyen rang sab
Aahang saray khak ka pewand hongay
Bicharnay rethne walon kop her say laut aanay ki duhayi day rahe hain
Magar ab kon aayega palat kar kon aaya hai jinhen aana tha wo tu aaye bhi aur
Kab kay rukhsat ho chukay hain
Mein sab kuch janta bhi hoon magar pher bhi
Meri aankhon mein rasta dekhte rehne ki khwab bhi wahi hai
Thakan se chor hoon pher safar ki aarzo ab wahi hai

Kuch Dair Pehle Neend Se

نظم
کچھ دیر پہلے نیند سے
میں جن کو چھوڑ آیا تھا شناسائی کی بستی کے وہ سارے راستے آواز دیتےہیں
نہیں معلوم اب کس واسطے آواز دیتے ہیں
لہو میں خاک اُڑتی ہے
بدن خواہش بہ خواہش ڈھہہ رہا ہے
اور نفس کی آمد وشد دل کی ناہمواریوں پر بین کرتی ہے
وہ سارے خواب ایک اک کرکے رخصت ہو چکے ہیں جن سے آنکھیں جاگتی تھیں
اور امیوں کے روزن شہر آئندہ میں کھلتے تھے
بہت آہستہ آہستہ
اندھیرا دل میں آنکھوں میں لہو میں بہتے بہتے جم گیا ہے
وقت جیسے تھم گیا ہے
بس اب ایک اور شب ایک اور پل جب سارے رستے بند ہوں
گے
وہ پل جب سارے بندھن کھڑکیاں آنگن، اُمیدیں، آرزوئیں
رنگ سب
آہنگ سارے خاک کا پیوند ہوں گے
ادھر کچھ دن سے جانے کیوں اُسی پل کی اُسی ساعت کی آوازیں سنائی دے رہی ہیں
بچھڑنے روٹھنے والوں کو پھر سے لوٹ آنے کی دُہائی دے رہی ہیں
مگر اب کون آئے گا پلٹ کر کون آیا ہے جنھیں آنا تھا وہ توآئے بھی اور
کب کے رخصت ہوچکے ہیں
میں سب کچھ جانتا بھی ہوں مگر پھر بھی
مری آنکھوں میں رستہ دیکھتے رہنے کی خواب بھی وہی ہے
تھکن سے چور ہوں پھر بھی سفر کی آرزو اب بھی وہی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں