Mujhe Azad Kar Do Ek Din Sab Such Bata Kar

Mujhe Azad Kar Do Ek Din Sab Such Bata Kar

Mujhe Azad Kar Do Ek Din Sab Such Bata Kar
Tumharay aur us ke darmyan kia chal raha hai

Abhi tak kaar amad hai teri aankhon ka jadoo
Yahan abhi tak wo hi makroob sikka chal raha hai

Juda hain es liye ek dosray se yeh kinare
Kisi kashti peh en donon ka jhagra chal raha hai

Usi par chorr rakha hai yeh karobar ulfat
Nahi pocha kabhi us se keh kaisa chal raha hai

Mujhe azad kar do ek din sub such bata kar
Tumharay aur us ke darmyan kia chal raha hai
غزل
مجھے آزاد کر دو ایک دن سب سچ بتا کر
تمہارے اور اُس کے درمیان کیا چل رہا ہے

ابھی تک کار آمد ہے تیری آنکھوں کا جادو
یہاں اب تک وہ ہی مکروب سکہ چل رہا ہے

جدا ہیں اس لیے ایک دوسرے سے یہ کنارے
کسی کشتی پہ ان دونوں کا جھگڑا چل رہا ہے

اُسی پر چھوڑ رکھا ہے یہ کاروبار اُلفت
نہیں پوچھا کبھی اُس سے کہ کیسا چل رہا ہے

مجھے آزاد کر دو ایک دن سب سچ بتا کر
تمہارے اور اُس کے درمیان کیا چل رہا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں