Mujhe Pucha Hai Aa Kar Tum Ne Us Akhlaq

Mujhe Pucha Hai Aa Kar Tum Ne Us Akhlaq

Mujhe Pucha Hai Aa Kar Tum Ne Us Akhlaq-E-Kamil Se
Keh mein sharminda ho kar reh gaya andaza-e-dil se

Nazar ke rukh ko ya to dil ki janib phear lene do
Nahi tu samne aa jao uth kar parda-e-dil se

Umeedin uth rahi hain saikrron ummedwaron ki
Mein tanha hoon magar tanha nahi uthonga mehfil se

Amir karwan jis roshni ke bal pe barhta hai
Nikalta hai wo taara subah hote khaak-e-manzil se

Unhain dunya ab ashk-e-gham kahaye ya khoon ki bonden
Mohabbat ne chiragh aankhoon mein la kar rakh diye dil se

Ab us nang-e-mohabbat se kinara bhi tu mushkil hai
Mujhe jis ki muhabbat ka yaqin aaya tha mushkil se

Abhi tu shaam hai aaghaz hai parwana sozi ka
Koi es shamaa ko agaah kar do subha mehfil se

Abhi tahqeeq behtar hai keh phir shikwaa abaas hoga
Keh meer-e-karwan waqif nahi aadaab-e-manzil se

Mitanay se kabhi naqsh-e-muhabbat mit nahi sakta
Mera afsana niklega teri rudaad-e-mehfil se

Ghanimat hai nazar rooshan hai dil ab tak dharrkta hai
Muhabbat mein tu yeh aasaniyan milti hain mushkil se

Ufuq ke aaine mein ho na ho dharay ke saaye mein
Nazar aati hain taufanoon ki sarhad jaise sahil se

Tira jalwa tou kya tou khud bhi tafrih-e-nazar hota
Meri aankhoon ne ab tak bheek mangi hi nahi dil se

Sitam ki akhari manzil pe izhar-e-pashemani
Nikal aate hain ansoo youn tou har dukhtay howay dil se

Mein ek zarra hoon lekin wusat-e-sahra se waqif hoon
Utha sakta nahi khud meer-e-mehfil mujh ko mehfil se

Tahayya kar liya tang aa ke go tark-e-talaq ka
Magar ab fiker hai yeh khat unhen likhen gay kis dil se

Mujhe ehsan mere qaaflay walon ne ab samjha
Keh yeh zarra sitara ban gaya taqdir-e-manzil se

Mujhe pucha hai aa kar tum ne us akhlaq-e-kamil se
Keh mein sharminda ho kar reh gaya andaza-e-dil se
غزل
مجھے پوچھا ہے آ کر تم نے اس اخلاق کامل سے
کہ میں شرمندہ ہو کر رہ گیا اندازہ دل سے

نظرکے رخ کو یا تو دل کی جانب پھیر لینے دو
نہیں تو سامنے اجاو اٹھ کر پردہ دل سے

امیدیں اٹھ رہی ہیں سیکڑوں امیدواروں کی
میں تہنا ہوں مگر تنہا نہیں اٹھوں گا محفل سے

امیر کارواں جس روشنی کے بل پہ بڑھتا ہے
نکلتا ہے وہ تارا صبح ہوتے خاک منزل سے

انہیں دنیا اب اشک غم کہے یا خوں کی بوندیں
محبت نے چراغ انکھوں میں لاکر رکھ دیئے دل سے

اب اس ننگ محبت سے کنارہ بھی تو مشکل ہے
مجھے جس کی محبت کا یقیں ایا تھا مشکل سے

ابھی تو شام ہے آغاز ہے پروانہ سوزی کا
کوئی اس شمع کو آگاہ کر دو صبح محفل سے

ابھی تحقیق بہتر ہے کہ پھر شکوہ عبث ہوگا
کہ میر کاروں واقف نہیں آداب منزل سے

مٹانے سے کبھی نقش محبت مٹ نہیں سکتا
مرا افسانہ نکلے گا تری روداد محفل سے

غنیمت ہے نظر رشن ہے دل اب تک دھڑکتا ہے
محبت میں تو یہ اسانیاں ملتی ہیں مشکل سے

افق کے آئنے میں ہو نہ ہو دھارے کے سائے میں
نظر آتی ہیں طوفانوں کی سرحد جیسے ساحل سے

ترا جلوہ تو کیا تو خود بھی تفریح نظر ہوتا
مری انکھوں نے اب تک بھیک مانگی ہی نہیں دل سے

ستم کی آخری منزل پہ اظہار پشیمانی
نکل آتے ہیں انسو یوں تو ہر دکھتے ہوئے دل سے

میں اک ذرہ ہوں لیکن وسعت صحرا سے واقف ہوں
اٹھا سکتا نہیں خود میر محفل مجھ کو محفل سے

تہیہ کر لیا تنگ آ کےگو ترک تعلق کا
مگر اب فکر ہے یہ خط انہیں لکھیں گے کس دل سے

مجھے احسان میرے قافلے والوں نے اب سمجھا
کہ یہ ذرہ ستارا بن گیا تقدیر منزل سے

اپنا تبصرہ بھیجیں