Aasaan Yeh Kaare Wafa Hota Nahi Hai

Ghazal
Aasaan Yeh Kaare Wafa Hota Nahi Hai
Kehne ko tou kehte hain kia hota nahi hai

Awal tou main naraz nahi hota hun liken
Ho jaun tou phir mujh se bura hota nahi hai

Gusse main tou wo maa ki tarah hota hai bilkul
Lagta hai khafaa such main khafaa hota nahi hai

Ham apni mohabbat main samjh len tou samjh len
Warna kisi bande main khuda hota nahi hai

Aasaan yeh kaare wafa hota nahi hai
Kehne ko tou kehte hain kia hota nahi hai
غزل
آسان یہ کارے وفا ہوتا نہیں ہے
کہنے کو تو کہتے ہیں کیا ہوتا نہیں ہے

اوّل تو میں ناراض نہیں ہوتا ہوں لیکن
ہو جاؤں تو پھر مجھ سے بُرا ہوتا نہیں ہے

غصے میں تو وہ ماں کی طرح ہوتا ہے بالکل
لگتا ہے خفا سچ میں خفا ہوتا نہیں ہے

ہم اپنی محبت میں سمجھ لیں تو سمجھ لیں
ورنہ کسی بندے میں خدا ہوتا نہیں ہے

آسان یہ کارے وفا ہوتا نہیں ہے
کہنے کو تو کہتے ہیں کیا ہوتا نہیں ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں