Wo Ilm Mein Jis Ke Awal Se Har Raz Nahan

Wo Ilm Mein Jis Ke Awal Se Har Raz Nahan

Wo Ilm Mein Jis Ke Awal Se Har Raz Nahan-E-Hasti Hai
Wo jis ke isharon par raqsan alam ki bulandi pasti hai

Wo jis ki nazar ke taroon se wehshi ka gariban selta hai
Wo jis ke tajjali khane se khurshid ko jalwa milta hai

Wo jis ka wazifaa karte hain kohsar ke bekhod nizare
Wo jis ki lagan mein tar rehte hain ahl-e-safa ke rukhsar

Wo jis ki nigahen rehti hain haryali ki rakhwali par
Wo jis sanayi hoti hain gulzar mein dali dali par

Wo jis ki rehmat ke naghme gaati hai hawa barsaton mein
Wo jis ki yad satati hai sardi ki suhani raton mein

Wo dil mein jis ki ulfat se ek noor sa lehra jata hai
Jab bagh ki larzan shakhoon mein mehtab jabin chamkata hai

Wo naam se jis ke chashmon mein tamheed tar-nam hoti hai
Wo jis ke shigoofa zaron mein taqleed-e-tabbassum hoti hai

Wo jis ne hamesha ronda hai umed ki rukhshan basti ko
Jo rah fanaa par lata hai paband qayood-e-hasti ko

Wo jis ki khamoshi raaton ko chaati hai kushada galion mein
Wo jis ke tabbassum baste hain gulzar ki kamsan kalion mein

Wo jis ke sare alam mein mehbob-e-shabeeh insan hai
Laraib usi ka banda hoon eshan mera yeh iman hai
Wo ilm mein jis ke awal se har raz nahan-e-hasti hai
غزل
وہ علم میں جس کے اول سے ہر راز نہانِ ہستی ہے
وہ جس کے اشاروں پر رقصاں عالم کی بلندی پستی ہے

وہ جس کی نظر کے تاروں سے وحشی کا گریباں سلتا ہے
وہ جس کے تجلی خانے سے خورشید کو جلوہ ملتا ہے

وہ جس کا وظیفہ کرتے ہیں کُہسارکے بیخود نظارے
وہ جس کی لگن میں تر رہتے ہیں اہل صفا کے رخسارے

وہ جس کی نگاہیں رہتی ہیں ہریالی کی رکھوالی پر
وہ جس کی ثنائیں ہوتی ہیں گلزار میں ڈالی ڈالی پر

وہ جس کی رحمت کے نغمے گاتی ہے ہوا برساتوں میں
وہ جس کی یاد ستاتی ہے سردی کی سُہانی راتوں میں

وہ دل میں جس کی الفت سے اک نور سالہرا جاتا ہے
جب باغ کی لرزاں شاخوں میں مہتاب جبیں چمکاتا ہے

وہ نام سے جس کے چشموں میں تمہید ترنم ہوتی ہے
وہ جس کے شگوفہ زاروں میں تقلید تبسم ہوتی ہے

وہ جس نے ہمیشہ روندا ہے اُمید کی رخشاں بستی کو
جو راہ فنا پر لاتا ہے پابند قیودِ ہستی کو

وہ جس کی خموشی راتوں کوچھاتی ہے کشادہ گلیوں میں
وہ جس کے تبسم بستے ہیں گلزار کی کمسن کلیوں میں

وہ جس کو سارے عالم میں محبوب شبیہ انسان ہے
لاریب اُسی کا بندہ ہوں احسان مرا یہ ایماں ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں