Lagta Hai Kar Ke Lamba Safar Aa Raha Hoon Mein

Lagta Hai Kar Ke Lamba Safar Aa Raha Hoon Mein

Lagta Hai Kar Ke Lamba Safar Aa Raha Hoon Mein
Halankeh ghar se seedha idhar aa raha hoon mein

Bas intezaar tha keh tujhe chhor de woh shakhs
Ab uss ka intezaar nah kar aa raha hoon mein

Yeh faida hai dekha mujh andhay se rabat ka
Tareek rasta hai magar aa raha hoon mein

Karne lagay mujhe jo nazar andaaz un ki khair
Itna to teh howa keh nazar aa raha hoon mein

Mujh tak rasai nahi hai idhar nah aa
Tou khud kahan khara hai thaher aa raha hoon mein

Har roz kyun pighal ke tapakta hoon aankh se
Kaisi toppish ke zair asar aa raha hoon mein

Kuch bhi yahan naya nahi lagta mujhe umair
Shayad zameen pe bar dagar aa raha hoon mein

Lagta hai kar ke lamba safar aa raha hoon mein
Halankeh ghar se seedha idhar aa raha hoon mein
غزل
لگتا ہے کر کے لمبا سفر آرہا ہوں میں
حالانکہ گھر سے سیدھا اِدھر آ رہا ہوں میں

بس انتظار تھا کہ تجھے چھوڑ دے وہ شخص
اب اُس کا انتظار نہ کر آ رہا ہوں میں

یہ فائدہ ہے دیکھا مجھ اندھے سے ربط کا
تاریک راستہ ہے مگر آ رہا ہوں میں

کرنے لگے مجھے جو نظر انداز اُن کی خیر
اِتنا تو طے ہوا کہ نظر آ رہا ہوں میں

مجھ تک رسائی نہیں ہے اِدھر نہ آ
تو خود کہاں کھڑا ہے ٹھہر آ رہا ہوں میں

ہر روز کیوں پگھل کے ٹپکتا ہوں آنکھ سے
کیسی تپش کے زیر اثر آ رہا ہوں میں

کچھ بھی یہاں نیا نہیں لگتا مجھے عمیر
شاید زمیں پہ بارِ دگر آ رہا ہوں میں

لگتا ہے کر کے لمبا سفر آرہا ہوں میں
حالانکہ گھر سے سیدھا اِدھر آ رہا ہوں میں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں