Kisi Ko Chornay Ke Gham Mein Aur Malaal

Kisi Ko Chornay Ke Gham Mein Aur Malaal

Kisi Ko Chornay Ke Gham Mein Aur Malaal Mein Ho
Agar woh lout ke aye shikasta haal mein ho

Uarooj par sabhi auqaat bhool jate hain
Wohi khuloos dikhata hai, jo zawal mein ho

Nah dijye usay tark-e-taluqaat ka dosh
Yeh raigani bhi shayad, hamari faal mein ho

Koi tu shaam yun utray dareecha-e-shab par
Chiragh wajad mein aaya ho lo dhmal mein ho

Kia hai zakhm ko kuch isliye nazar andaaz
Kharab aur zyada nah dekh bhaal mein ho

Kabhi tu aisa bhi manzar dikha khuda jis mein
Parinda qaid se bahir, shikari jaal mein ho

So kar-e-gham mein tawazun bara zaroori hai
Koi bhi kaam kiya jaye aitdaal mein ho

Kisi ko chornay ke gham mein aur malaal mein ho
Agar woh lout ke aye shikasta haal mein ho
غزل
کسی کے چھوڑنے کے غم میں اور ملال میں ہو
اگر وہ لوٹ کے آئے، شکستہ حال میں ہو

عروج پر سبھی اوقات بھول جاتے ہیں
وہی خلوص دِکھاتا ہے، جو زوال میں ہو

نہ دیجئے اُسے ترکِ تعلقات کا دوش
یہ رائیگانی بھی شاید، ہماری فال میں ہو

کوئی تو شام یوں اترے دریچہ ء شب پر
چراغ وجد میں آیا ہو، لو دھمال میں ہو

کیا ہے زخم کو کچھ اِسلئے نظر انداز
خراب اور زیادہ نہ دیکھ بھال میں ہو

کبھی تو ایسا بھی منظر دکھا خدا جس میں
پرندہ قید سے باہر، شکاری جال میں ہو

سو کارِ غم میں توازن بڑا ضروری ہے
کوئی بھی کام کیا جائے، اعتدال میں ہو

کسی کے چھوڑنے کے غم میں اور ملال میں ہو
اگر وہ لوٹ کے آئے، شکستہ حال میں ہو
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں