Man Le Ab Bhi Meri Jaan-E-Ada Dard Na Chun

غزل
مان لے اب بھی مری جان ادا درد نہ چن
کام آتی نہیں پھر کوئی دعا درد نہ چن
 
اور کچھ دیر میں مجھ کو چلے جانا ہوگا
اور کچھ دیر مجھے خواب دکھا درد نہ چن
 
ایک بھی درد نہ کم ہوگا کئی صدیوں میں
اب بھی کہتا ہوں تجھے وقت بچا درد نہ چن
 
وہ جو لکھا ہے کسی طور نہیں ٹل سکتا
آ مرے دل میں کوئی دیپ جلا درد نہ چن
 
میں ترے لمس سے محروم نہ رہ جاؤں کہیں
آخری بار مجھے خود سے لگا درد نہ چن
 
اب تو یہ ریشمی پوریں بھی چھدی جاتی ہیں
خود کو اب بخش بھی دے ظلم نہ ڈھ درد نہ چن
 
یہ نہیں ہوں گے تو کھائے نہیں ہو جاؤں گا میں
میرے زخموں سے کوئی گیت بنا درد نہ چن
 
کچھ نہ دے گا یہ مسائل سے الجھتے رہنا
چھوڑ سب کچھ مری بانہوں میں سما درد نہ چن

Ghazal

Man Le Ab Bhi Meri Jaan-E-Ada Dard Na Chun
Kaam aati nahin phir koi dua dard na chun
 
Aur kuchh der mein mujh ko chale jaana hoga
Aur kuchh der mujhe khwab dikha dard na chun
 
Ek bhi dard na kam hoga kai sadiyon mein
Ab bhi kahta hun tujhe waqt bacha dard na chun
 
Wo jo likkha hai kisi taur nahin tal sakta
Aa mere dil mein koi dip jala dard na chun
 
Main tere lams se mahrum na rah jaun kahin
Aakhiri bar mujhe khud se laga dard na chun
 
Ab to ye reshmi poren bhi chhidi jati hain
Khud ko ab bakhsh bhi de zulm na dah dard na chun
 
Ye nahin honge to khae nahin ho jaunga main
Mere zakhmon se koi git bana dard na chun
 
Kuchh na dega ye masail se ulajhte rahna
Chhod sab kuchh meri banhon mein sama dard na chun

اپنا تبصرہ بھیجیں